Home / کالم / استقبالِ رمضان میں آنحضرت ا کے بیانات

استقبالِ رمضان میں آنحضرت ا کے بیانات

 


استقبالِ رمضان میں آنحضرت ا کے بیانات
مفتی محمد وقاص رفیع
M.waqqasrafi1986@gmail.com
حضور ِ اقدس صلی اللہ علیہ وسلم کو رمضان المبارک کی آمد کا اِس قدر اشتیاق اور انتظار رہتا کہ آپ دو ماہ قبل ہی سے اُس کے آنے کی تیاری اور اُس کے استقبال میں لگ جاتے۔ چنانچہ حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ جب رجب کا مہینہ شروع ہوتا تو حضور صلی اللہ علیہ وسلم اللہ تعالیٰ سے یہ دُعاءمانگتے: ”ترجمہ: اے اللہ! ہمارے لئے رجب اور شعبان کے مہینوں میں برکت عطاءفرمادیجئے اور ہمیں رمضان کے مہینے تک (سلامتی کے ساتھ) پہنچادیجئے!۔“ (مسند احمد)اور جب شعبان کا مہینہ شروع ہوتا تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم لوگوں سے فرمایا کرتے: ” رمضان کے صحیح حساب کی غرض سے شعبان کے چاند (اور اُس کی تاریخوں کے حساب کو) خوب اچھی طرح محفوظ کرلیا کرو!۔“ (مستدرک حاکم)اور جب رمضان کا مہینہ آتا تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم رمضان کی آمد کی خوشی میں صحابہ کرام رضی اللہ عنہم سے پوچھتے کہ تم کس کا استقبال کر رہے ہو اور کون تمہارا استقبال کر رہا ہے؟۔“ (الترغیب والترہیب)پھر جب رمضان کا مہینہ شروع ہونے کے قریب ہوتا تو آپ رمضان المبارک کے حوالے سے صحابہ کرام میں وعظ و نصیحت فرماتے ، جس میں ماہِ رمضان کی عظمت و فضیلت، اُس کے انوارات و برکات اور اُس کے فوائد و ثمرات بیان کرکے اعمالِ صالحہ اور نیک کاموں کی ترغیب دی جاتی اور اِس کے بالمقابل اِس ماہِ رمبارک کے حقوق سے پہلو تہی کرنے، اِس کے اجر و ثواب سے آنکھیں چرانے اور اِس کے فیوض و اثرات سے محروم رہنے والوں کو اللہ تعالیٰ کے عذاب اور اُس کی ناراضگی سے ڈرایا دھمکایا جاتا اور قبر و حشر کی اندگی اور آخرت کی فکر کا دیا اُن کے ویران دلوں میں جلایا جاتا۔
چنانچہ حضرت سلمان فارسی رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے شعبان کی آخری تاریخ میں ہم لوگوں میں بیان فرمایا کہ اے لوگو! تمہارے اوپر ایک مہینہ آرہا ہے جو بہت بڑا اور مبارک مہینہ ہے۔ اس میں ایک رات (شبِ قدر) ہے جو ہزار مہینوں سے بڑھ کر ہے۔ اللہ تعالیٰ نے اس کے روزے کو فرض فرمایا ہے، اور اس کے رات کے قیام (یعنی تراویح) کو ثواب کی چیز بنایا ہے۔ جو شخص اس مہینہ میں کسی نیکی کے ساتھ اللہ تعالیٰ کا قرب حاصل کرے وہ ایسا ہے جیساکہ غیر رمضان میں فرض ادا کیا۔ اور جو شخص اس مہینہ میں کس فرض کو ادا کرے وہ ایسا ہے جیساکہ غیر رمضان میں ستر فرض ادا کرے۔ یہ مہینہ صبر کا ہے اور صبر کا بدلہ جنت ہے۔ یہ مہینہ لوگوں کے ساتھ غم خواری کرنے کا ہے۔ اس مہینہ میں مو¿من کا رزق بڑھا دیا جاتا ہے۔ جو شخص کسی روزہ دار کا روزہ افطار کرائے اس کے لئے گناہوں کے معاف ہونے اور آگ سے خلاصی کا سبب ہوگا اور روزہ دار کے ثواب کی مانند اس کو ثواب ہوگا مگر اس روزہ دار کے ثواب میں سے کچھ کم نہیں کیا جائے گا۔ صحابہ رضی اللہ عنہم نے عرض کیا یا رسول اللہ! ہم میں سے ہر شخص تو اتنی وسعت نہیں رکھتا کہ روزہ دار کو افطار کرائے، تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ (پیٹ بھر کھلانے پر موقوف نہیں) یہ ثواب تو اللہ تعالیٰ ایک کھجور سے کوئی افطار کرادے یا ایک گھونٹ پانی پلادے یا ایک گھونٹ لسی پلادے اس پر بھی مرحمت فرمادیتے ہیں۔ یہ ایسا مہینہ ہے کہ اس کا اوّل حصہ اللہ تعالیٰ کی رحمت ہے اور درمیانی حصہ مغفرت ہے اور آخری حصہ آگ سے آزادی ہے۔ جو شخص اس مہینہ میں اپنے غلام (و خادم) کے بوجھ کو ہلکا کردے اللہ تعالیٰ اس کی مغفرت فرماتے ہیں اور آگ سے آزادی عطاءفرماتے ہیں۔ اور اس میں چار چیزوں کی کثرت رکھا کرو، جن میں سے دو چیزوں سے تم اللہ تعالیٰ کو راضی کرلو گے اور دو چیزیں ایسی ہیں کہ جن سے تمہیں چارہ¿ کار نہیں۔ وہ دو چیزیں جن سے تم اپنے رب کو راضی کرو گے وہ کلمہ شہادت اور استغفار کی کثرت ہے اور دوسری دو چیزیں یہ ہیں کہ جنت کی طلب کرو اور آگ سے پناہ مانگو۔ جو شخص کسی روزہ دار کو پانی پلائے اللہ تعالیٰ (قیامت کے دن) میرے حوض سے اس کو ایسا پانی پلائیں گے جس کے بعد جنت میں داخل ہونے تک اسے پیاس نہیں لگے گی۔(صحیح ابن خزیمہ)
حضرت علی رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں جب رمضان المبارک کی پہلی رات ہوئی تو حضور صلی اللہ علیہ نے کھڑے ہوکر اللہ تعالیٰ کی حمد و ثناءبیان کی اور فرمایا اے لوگو! اللہ تعالیٰ نے تمہارے دُشمن جنات (شیاطین) سے خود ہی نمٹ لیا ہے( کیوں کہ انہیں قید کردیا ہے) اور تم سے دُعاءقبول کرنے کا وعدہ کیا ہے اور فرمایا ہے: ”مجھ کو پکارو میں تمہاری درخواست قبول کروں گا۔“توجہ سے سنو! اللہ تعالیٰ نے ہر سرکش شیطان پر سات فرشتے مقرر فرمادیئے ہیں اور وہ رمضان ختم ہونے تک چھوٹ نہیں سکتا۔ غور سے سنو! رمضان کی پہلی رات سے لے کر آخری رات تک آسمان کے تمام دروازے کھلے رہیں گے، اور اس مہینہ میں ہر دُعاءقبول ہوتی ہے ۔ جب آخری عشرہ کی پہلی رات ہوتی حضور صلی اللہ علیہ وسلم لنگی کس لیتے اور عورتوں کے بیچ میں سے نکل جاتے اور اعتکاف فرماتے اور رات بھر عبادت فرماتے۔ کسی نے پوچھا لنگی کسنے کا مطلب کیا ہے؟ حضرت علی رضی اللہ عنہ نے فرمایا ان دنوں میں عورتوں سے جدا رہتے۔(الترغیب و الترہیب)
حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں جب ماہِ رمضان قریب آگیاتو حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے مغرب کے وقت مختصر بیان فرمایا، جس میں ارشاد فرمایا: ” رمضان تمہارے سامنے آگیا ہے اور تم اس کااستقبال کرنے والے ہو۔ غور سے سنو! رمضان کی پہلی رات میں ہی اہل قبلہ (یعنی مسلمانوں میں سے) ہر ایک کی مغفرت کردی جاتی ہے۔(کنز العمال فی سنن الاقوال والافعال)
حضرت عبادہ بن صامر رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ ایک مرتبہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے رمضان المبارک کے قریب ارشاد فرمایا کہ رمضان کا مہینہ آگیا ہے جو بڑی برکت والا ہے، حق تعالیٰ شانہ اس میں تمہاری طرف متوجہ ہوتے ہیں اور اپنی رحمت خاصہ نازل فرماتے ہیں، خطاو¿ں کو معاف فرماتے ہیں، دُعاءکو قبول کرتے ہیں، تمہارے تنافس کو دیکھتے ہیںاور ملائکہ سے فخر کرتے ہیں، پس اللہ کو اپنی نیکی دکھلاو¿ بد نصیب ہے وہ شخص جو اِس مہینہ میں بھی اللہ کی رحمت سے محروم رہ جاوے۔(معجم طبرانی)
حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ ایک مرتبہ رمضان المبارک کا مہینہ آیا تو حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ تمہارے اوپر ایک مہینہ آیا ہے جس میں ایک رات ہے جو ہزار مہینوں سے افضل ہے، جو شخص اِس رات سے محروم رہ گیا، گویا ساری ہی خیر سے محروم رہ گیا اور اِس کی بھلائی سے محروم نہیں رہتا مگر وہ شخص کو حقیقتاً محروم ہی ہے۔(سنن ابن ماجہ)
مذکورہ بالا تمام احادیث سے چند اُمور ثابت ہوتے ہیں: اوّل یہ کہ رمضان المبارک کے آنے کا استقبال حضور صلی اللہ علیہ وسلم شعبان کے ختم ہونے سے پہلے ہی شروع فرمادیتے تھے اور لوگوں میں وعظ و نصیحت کرکے رمضان المبارک میں ایک لمحہ ضائع کئے بغیر اللہ تعالیٰ کی زیادہ سے زیادہ عبادت کرنے کے لئے اُنہیںتیار فرماتے تھے۔دوسرے یہ کہ رمضان المبارک کی سب سے مقدس اور بابرکت رات (شبِ قدر) میں آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے عبادت کرنے کی بہت زیادہ ترغیب اور تاکید کی ہے کہ یہ ایک رات ہزار مہینوں سے افضل ہے۔ تیسرے یہ کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے رمضان المبارک کے روزوں کو اللہ تعالیٰ کی طرف سے اُمت پر فرض قطعی ہونا بتلایا ہے جس کا بغیر کسی عذرِ شرعی کے چھوڑنا کبیرہ گناہ ہے اور اِس سے آدمی فاسق و فاجر ہوجاتا ہے۔ چوتھے یہ کہ رمضان المبارک کی مقدس راتوں میں (تراویح کے) قیام کو اپنی طرف منسوب کرکے اسے سنت قرار دیا ہے۔ اسی وجہ سے تمام ائمہ¿ اسلام نے رمضان المبارک کی راتوں میں تراویح کے سنت نبوی صلی اللہ علیہ وسلم ہونے پر اتفاق کیا ہے۔
﴾….کوائف….﴿
نام: مفتی محمد وقاص رفیع
مستقل پتہ: محلہ فضل آباد (بڑی بن) نیو کچہری والی گلی، راولپنڈی روڈ، فتح جنگ، ضلع اٹک
موجودہ پتہ: جامع مسجد کلثوم، ایبٹ آباد روڈ، لب میل، اسلام پور، واہ کینٹ، ضلع راولپنڈی
ای میل ایڈریس: M.waqqasrafi1986@gmail.com
:

Check Also

نور محمدی ﷺ

    نور محمدی ﷺ کالم : بزمِ درویش تحریر:پروفیسر محمد عبداللہ بھٹی ای میل: ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *