Home / تعلیم / تعلیم کسی بھی قوم یا معاشرے کےلئے ترقی کی ضامن ہے، مولانا ڈاکٹر قاسم محمود

تعلیم کسی بھی قوم یا معاشرے کےلئے ترقی کی ضامن ہے، مولانا ڈاکٹر قاسم محمود

 

 

تعلیم کسی بھی قوم یا معاشرے کےلئے ترقی کی ضامن ہے، مولانا ڈاکٹر قاسم محمود
انسان کو اشرف المخلوقات کا درجہ علم کی وجہ سے دیا گےا ہے، القاسم پبلک اسکول کی تقریب سے خطاب

کراچی()جامعہ اسلامیہ مخزن العلوم کراچی کے زیر اہتمام القاسم پبلک اسکول میں سالانہ امتحانات کا آغاز پر منعقدہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے مولانا ڈاکٹر قاسم محمود نے کہا کہ تعلیم ہر انسان چاہے وہ آمیر ہو یا غریب ،مرد ہو یا عورت کی بنیادی ضرورت میں سے ایک ہے ۔یہ انسان کا حق ہے جو کوئی اسے نہیں چھین سکتا۔تعلیم کسی بھی قوم یا معاشرے کےلئے ترقی کی ضامن ہے یہی تعلیم قوموں کی ترقی اور زوال کی وجہ بنتی ہے انہوں نے کہا کہ تعلیم وہ زیور ہے جو انسان کا کردار سنوراتی ہے دنیا میں اگر ہر چیز دیکھی جائے تو وہ بانٹنے سے گھٹتی ہے مگر تعلیم ایک ایسی دولت ہے جو بانٹنے سے گھٹتی نہیں بلکہ بڑھ جاتی ہے اور انسان کو اشرف المخلوقات کا درجہ علم کی وجہ سے دیا گےا ہے۔ اسلام میں تعلیم حاصل کرنا فرض کیا گےا ہے ۔آج کے اس پر آشوب اور تےز ترین دور میں تعلیم کی ضرورت بہت اہمیت کا حامل ہےانہوں نے کہا کہ جہاں جدید علوم کو سیکھنا ضروری ہے وہاں اسکے ساتھ ساتھ دینی تعلیم کا حصول بھی ہر مسلمان پر فرض ہے۔ اسی تعلیم کی وجہ سے زندگی میں خدا پرستی ،عبادت ،محبت خلوص،ایثار،خدمت خلق،وفاداری اور ہمدردی کے جذبات بیدار ہوتے ہیں ۔اخلاقی تعلیم کی وجہ سے صالح او رنیک معاشرہ کی تشکیل ہوتی ہے تعلیم کی اولین مقصد ہمیشہ انسان کی ذہنی ،جسمانی او روحانی نشونما کرنا ہے تعلیم حصول کےلئے قابل اساتذہ بھے بے حد ضروری ہیں ، جوبچوں کو اعلٰی تعلیم کے حصوص میں مدد فراہم کرتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ بدقسمتی سے تعلیم کو بزنس بنادیا گیا ہے ۔آج مہنگائی کے اس دور غریب لوگ اپنے بچوں کو صرف اس لےے تعلیم نہیں دیتے کہ وہ پرائیویٹ اسکولوں کے بھاری فیس ادا کرنے کی استطاعت نہیں رکھتے ،القاسم پبلک اسکولنگ سسٹم کے قیام کا اصل مقصد بھی یہ ہے کہ وہ بچے جو غربت کی وجہ سے اسکول جانے سے محروم ہیں ان کو علم کے زیور سے آراستہ کیا جائے ۔

Check Also

انٹر کامرس پرائیویٹ کے امتحان میں طالبات نے جھنڈے گاڑ دیے

    کراچی: اعلیٰ ثانوی تعلیمی بورڈ کراچی نے انٹرمیڈیٹ سال دوم کامرس پرائیویٹ کے سالانہ ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *