Home / کالم / حافظ کریم اللہ چشتی پائی خیل،میانوالی

حافظ کریم اللہ چشتی پائی خیل،میانوالی

 

 

حافظ کریم اللہ چشتی پائی خیل،میانوالی
”سلمان منااہل الب©©©یت“
حضرت سلمان فارسی رضی اللہ تعالیٰ عنہ کاسرکارمدینہ صلی اللہ علیہ والہ وسلم کے اکابرصحابہ میں شمارہوتاہے ۔آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ بہت عابدوزاہداورمتقی وپرہیزگارتھے ۔آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی کنیت ”ابوعبداللہ“اورلقب ”سلمان الخیر“ہے ۔آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ سرکارِمدینہ صلی اللہ علیہ والہ وسلم کے آزادکردہ غلام ہیں۔ام المومنین سیدہ عائشة الصدیقہ رضی اللہ تعالیٰ عنہافرماتی ہیں ”کہ یہ رات میں بالکل ہی اکیلے صحبت نبوی سے سرفرازہواکرتے تھے“۔حضرت علی المرتضیٰ شیرخداکرم اللہ وجہہ الکریم فرمایاکرتے تھے کہ ”سلمان فارسی رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے علم اوّل بھی سیکھااورعلم آخربھی سیکھااوروہ ہم اہل بیت میں سے ہیں“۔
قبول اسلام
حضرت سلمان فارسی رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے قبولِ اسلام کا واقعہ کتبِ تاریخ و سیر میں تفصیل سے درج ہے۔ آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ علاقہ اصفہان کے ایک دیہات کے دیہاتی کسان کے اکلوتے بیٹے تھے ۔آتش پرستی سے توبہ کر کے عیسائیت کے دامن سے وابستہ ہوئے تھے۔ پادریوں اور راہبوں سے حصول علم کا سلسلہ بھی جاری رہا لیکن کہیں بھی دل کو اطمینان حاصل نہ ہوا۔ اسی سلسلے میں آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے کچھ عرصہ غموریا کے پادری کے ہاں بھی اس کی خدمت میں گزارا۔ غموریا کا پادری الہامی کتب کا ایک جید عالم تھا۔ اس کا آخری وقت آیا تو حضرت سلمان فارسی رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے دریافت کیا کہ اب میں کس کے پاس جاو¿ں؟ اس عالم نے بتایا کہ نبی آخر الزماں (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کا زمانہ قریب ہے۔ یہ نبی دین ابراہیمی کے داعی ہوں گے۔ اور پھر غموریا کے اس پادری نے مدینہ منورہ کی تمام نشانیاں حضرت سلمان فارسی رضی اللہ تعالیٰ عنہ کو بتا دیں کہ نبی آخرالزماں (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) مکہ سے ہجرت کر کے کھجوروں کے جھنڈ والے اس شہر دلنواز میں سکونت پذیر ہوں گے۔ عیسائی پادری نے اللہ کے اس نبی کے بارے میں بتایا کہ وہ صدقہ نہیں کھائیں گے البتہ ہدیہ قبول کر لیں گے اور یہ کہ ان کے دونوں کندھوں کے درمیان مہر نبوت ہو گی۔ پادری اس جہان فانی سے کوچ کر گیا۔آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے تلاش حق کے لئے غموریا کو خدا حافظ کہا اور آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ شہر نبی کی تلاش میں نکل پڑے۔ سفر کے دوران حضرت سلمان فارسی رضی اللہ تعالیٰ عنہ چند تاجروں کے ہتھے چڑھ گئے چونکہ آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے دل میں نبی آخر الزماں صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے دیدار کی تڑپ ذرا بھی کم نہ ہوئی بلکہ آتش شوق اور بھی تیز ہو گئی۔ یہ تاجرآپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کومکہ المکرمہ لے آئے جس کی سرزمین نبی آخرالزماں صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کامولد پاک ہونے کا اِعزاز حاصل کر چکی تھی۔ تاجروں نے حضرت سلمان فارسی رضی اللہ تعالیٰ عنہ کو اپنا غلام ظاہر کیا اورانہیں مدینہ منورہ(جواس وقت یثرب تھا) کے بنی قریظہ کے ایک یہودی کے ہاتھ فروخت کر دیا۔ انہوں نے یہودی کی غلامی قبول کر لی۔۔۔۔ یہودی آقا کے ساتھ جب وہ یثرب (مدینہ منورہ) پہنچ گئے توگویا اپنی منزل کو پا لیا۔غموریا کے پادری نے یثرب کے بارے میں انہیں جو نشانیاں بتائی تھیں وہ تمام نشانیاں حضرت سلمان فارسی رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے دیکھ لیں، وہ ہر ایک سے نبی آخرالزماں صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ظہور کے بارے میں پوچھتے رہتے لیکن ابھی تک قسمت کا ستارا اوجِ ثریا پر نہ چمک پایا تھا اور وہ بے خبر تھے کہ نبی آخرالزماں صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم مکہ سے ہجرت کر کے اس شہرِ خنک میں تشریف لا نے والے ہیں۔ بعض روایات میں مذکور ہے کہ حضرت سلمان فارسی رضی اللہ تعالیٰ عنہ ایک دن اپنے یہودی مالک کے کھجوروں کے باغ میں کھجور کے ایک درخت پر چڑھے ہوئے تھے کہ انہوں نے اپنے یہودی مالک کو کسی سے باتیں کرتے ہوئے سنا کہ مکہ المکرمہ سے ہجرت کر کے قبا میں آنے والی ہستی نبی آخرالزماں صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ہونے کی داعی ہے۔ حضرت سلمان فارسی رضی اللہ تعالیٰ عنہ ایک طشتری میں تازہ کھجوریں سجا کر سرکارمدینہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی بارگاہ میں حاضر ہوئے اور کہا کہ یہ صدقے کی کھجوریں ہیں۔ آقائے دوجہاں صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے وہ کھجوریں یہ فرما کر واپس کر دیں کہ ہم صدقہ نہیں کھایا کرتے۔ غموریا کے پادری کی بتائی ہوئی ایک نشانی سچ ثابت ہو چکی تھی۔ دوسرے دن پھر ایک خوان میں تازہ کھجوریں سجائیں اور کھجوروں کا خوان لے کر رسول کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی خدمت اقدس میں حاضر ہوئے۔ عرض کی یہ ہدیہ ہے، قبول فرما لیجئے۔ حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے یہ تحفہ قبول فرما لیا اور کھجوریں اپنے صحابہ میں تقسیم فرما دیں۔دو نشانیوں کی تصدیق ہو چکی تھی۔ اب مہر نبوت کی زیارت باقی رہ گئی تھی۔ تاجدارِکائنات صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم جنت البقیع میں ایک جنازے میں شرکت کے لئے تشریف لائے اور ایک جگہ جلوہ افروز ہوئے۔ حضرت سلمان فارسی رضی اللہ تعالیٰ عنہ آقائے دوجہاں صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی پشت کی طرف بے تابانہ نگاہیں لگائے بیٹھے تھے۔ سرکارِمدینہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے نورِ نبوت سے دیکھ لیا کہ” سلمان“ کیوں بے قراری کا مظاہرہ کر رہا ہے، آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ازرہِ محبت اپنی پشت انور سے پردہ ہٹا لیا تاکہ ”مہر نبوت“ کے دیدار کا طالب اپنے من کی مراد پا لے۔ پھر کیا تھا حضرت سلمان فارسی رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی کیفیت ہی بدل گئی، تصویر حیرت بن کے آگے بڑھے، فرط محبت سے” مہرنبوت“ کو چوم لیا اور آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پرایمان لاکر ہمیشہ کیلئے دامن مصطفی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے وابستہ ہو گئے۔(حاکم، المستدرک، جلد3 ،بزار، المسند،جلد6 ،طبرانی، معجم الکبیر، جلد6،ابن سعد، الطبقات الکبریٰ،جلد4ابونعیم، دلائل النبوة، جلد1)
مہرنبوت کی زیارت
حضرت بریدة بن الحصیب رضی اللہ تعالیٰ عنہ فرماتے ہیں کہ حضورنبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم جب مدینہ منورہ تشریف لائے تو حضرت سلمان فارسی رضی اللہ تعالیٰ عنہ ایک خوان لے کر آئے جس میں تازہ کھجوریں تھیں اور حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی خدمت میںوہ خوان پیش کیا۔ حضور نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے دریافت فرمایا کہ” سلمان ‘ ‘یہ کیسی کھجوریں ہیں۔ انہوں نے عرض کیا کہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر اور آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ساتھیوں پر صدقہ ہیں۔ حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا کہ ہم لوگ صدقہ نہیں کھاتے اس لئے میرے پاس سے اٹھا لو ۔دوسرے دن پھر ایسا ہی واقعہ پیش آیا کہ ”سلمان“ کھجوروں کا طباق لائے اور حضور اقدس صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ارشاد پر” سلمان“ نے عرض کیا کہ یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم یہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے لئے ہدیہ ہے۔ حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے خود ہی نوش فرمایا۔ (چنانچہ بیجوری نے اس کی تصریح کی ہے۔ حضرت سلمان فارسی رضی اللہ تعالیٰ عنہ کا اس طرح پر دونوں دن لانا حقیقت میں حضور اقدس صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے آقا بنانے کا امتحان تھا اس لئے کہ حضرت سلمان فارسی رضی اللہ تعالیٰ عنہ پرانے زمانے کے علماءمیں سے تھے اڑھائی سو برس اور بعض کے قول پر ساڑھے تین سو برس ان کی عمر ہوئی۔ انہوں نے حضور اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی علامات میں جو پہلی کتب میں پڑھ رکھی تھیں یہ بھی دیکھا تھا کہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم صدقہ نوش نہیں فرماتے اور ہدیہ قبول فرماتے ہیں اور آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے دونوں مونڈھوں کے درمیان ”مہر نبوت“ ہے ، پہلی دونوں علامتیں دیکھنے کے بعد پھر حضورنبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی پشت مبارک پر” مہر نبوت“ دیکھی تو مسلمان ہو گئے ۔حضرت سلمان فارسی رضی اللہ تعالیٰ عنہ اس وقت یہود بنی قریظہ کے غلام بنے ہوئے تھے۔ حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ان کو خریدا (مجازاً خریدا کے لفظ سے تعبیر کردیا ورنہ حقیقت میں انہوں نے حضرت سلمان فارسی رضی اللہ تعالیٰ عنہ کو مکاتب بنایا تھا۔ مکاتب بنانا اس کو کہتے ہیں کہ آقا غلام سے معاملہ کر لے کہ اتنی مقدار جو آپس میں طے ہو جائے کما کردے دو، پھر تم آزاد ہو) اور بدل کتابت بہت سے درہم قرار پائے اور نیز یہ کہ حضرت سلمان فارسی رضی اللہ تعالیٰ عنہ ان کے لئے (تین سو) کھجور کے درخت لگائیں اور ان درختوں کے پھل لانے تک ان کی خبر گیری کریں۔ پس حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے اپنے دست مبارک سے وہ درخت لگائے۔ حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا معجزہ تھا کہ سب درخت اسی سال پھل لے آئے مگر ایک درخت نہ پھلا۔ تحقیق سے معلوم ہوا کہ وہ درخت حضرت سلمان فارسی رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے ہاتھ کا لگایا ہوا تھا۔ حضور اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے دست مبارک کا نہیں۔ حضور اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے اس کو نکالا اور دوبارہ اپنے دست مبارک سے لگایا۔ حضوراکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا دوسرا معجزہ یہ ہوا کہ بے موسم لگایا ہوا درخت بھی اسی سال پھل لے آیا۔(شمائل ترمذی،باب مہرنبوت،صفحہ30)
خندق کھودنے کامشورہ
جنگ خندق میں مدینہ منورہ شہرکے گردخندق کھودنے کامشورہ آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے ہی دیاتھا۔آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے آزادہونے کے بعدسب سے پہلامعرکہ”غزوہ خندق“پیش آیا۔جس میں کفار ومشرکین نے پورے عرب کو ملا کر ایک بہت بڑی جمعیت کے ساتھ اس ارادے سے مدینہ شریف پر حملہ کرنے آئے تھے کہ دنیا سے مسلمانوں کا بالکل ہی صفایا کر دیا جائے۔جب آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو معلوم ہوا تو آپ صلی اللہ علیہ والہ وسلم نے مشورہ کے لئے صحابہ کرام کو بلایا،اور حالات بیان فر مائے۔حملہ چونکہ خود مدینہ منورہ پر تھا جس کی طرف کوئی قلعہ تھا نہ کوئی فصیل جو ان لوگوں کو مدینہ منورہ میں داخل ہونے سے روکتا۔حضرت سلمان فارسی رضی اللہ تعالیٰ عنہ ایرانیوں کی صف آرائیاں دیکھے ہوئے تھے اور مختلف حالات میں جنگ کے طریقہ کار سے واقف تھے۔انہوں نے مشورہ دیا کہ یارسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم !اتنے بڑے لشکر کا کھلے میدان میں مقابلہ کرنا مناسب نہیں ہے ۔اس لئے ہمیں مدینہ منورہ کے چاروں طرف خندقیں کھود کر شہر کو محفوظ کر دینا چاہئے۔یہ مشور ہ حضور اکرم نورمجسم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم اور صحابہ کرام علیہم الرضوان کو بڑا پسند آیااور اسی پر عمل کیا گیا۔خندق کی کھدائی میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم بنفس نفیس شریک تھے۔کفار مکہ کا لشکر مدینہ منورہ کی اینٹ سے اینٹ بجا دینے کے خیالی پلاو¿پکاتے ہوئے بڑے جوش وخروش میں آئے مگر مدینہ شریف کے ارد گرد بڑی بڑی خندقیں دیکھ کر حیران رہ گئے۔کفارومشرکین کے سارے ارادے ادھورے خواب بن کررہ گئے ۔اکیس بائیس دن رُکے رہے مگر مدینہ شریف تک پہنچنا نصیب نہ ہوا اور بالآخر ناکام لوٹنا پڑا۔اس کے علاوہ آپ تمام غزوات میں شریک رہے اور اسلام کی تحفظ کی خاطر اللہ کے دشمنوں کے خلاف جہاد فر مایا۔
فانوس بن کرجس کی حفاظت ہواکرے وہ شمع کیابجھے جسے روشن خداکرے
فضائل ومناقب
آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے فضائل و مناقب سے متعلق قرآنی آیات اورمتعدد روایتیں کتب احادیث میں موجود ہیں ،ان میں سے کچھ بطور اختصار یہاں پر قارئین کی نذرکی جاتی ہیں۔حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ فرماتے ہیں جب نبی کریم صلی اللہ علیہ والہ وسلم پر”سورہ الجمعہ“ نازل ہوئی اس وقت ہم آپ صلی اللہ علیہ والہ وسلم کی بارگاہ میں حاضرتھے ۔جب آپ نے یہ آیت ”وَاٰخَرِی±نَ مِن±ھُم± لَمَّایَل±حَقُو±ابِھِم±“تلاوت فرمائی توایک شخص نے عرض کی ۔یارسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم جواگلوں کے ساتھ ابھی نہیں ملے وہ کون لوگ ہیں ؟آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے کوئی جواب نہ دیاحتی کہ اس نے دویاتین بارعرض کی ،اس وقت ہم میں حضرت سلمان فارسی رضی اللہ تعالیٰ عنہ بھی تھے ۔نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے حضرت سلمان فارسی رضی اللہ تعالیٰ عنہ پرہاتھ رکھ کرفرمایا”اس ذات کی قسم جس کے دست قدرت میں میری جان ہے ۔اگردین ثُرَیَّا (ستارے)کے پاس بھی ہوتوفرزاندان فارس وہاں جائیں گے اوردین کوحاصل کرلیں گے “۔(مسلم شریف،کتاب فضائل الصحابہ، باب فضل فارس)آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ بہت طاقتورانسان تھے ۔انصارومہاجرین دونوں ہی آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے محبت کرتے تھے ۔چنانچہ انصاریوں نے کہناشروع کردیاکہ”سلمان منا“یعنی سلمان ہم میں سے ہے اور مہاجرین نے بھی یہی کیاکہ ”سلمان منا“یعنی سلمان ہم میں سے ہیں ۔آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی ذات پرسرکارِمدینہ صلی اللہ علیہ والہ وسلم کابہت بڑاکرم عظیم تھا۔سرکارِمدینہ صلی اللہ علیہ والہ وسلم نے جب انصارومہاجرین کانعرہ سناتوارشادفرمایا”سلمان منااہل البیت“یعنی سلمان ہم اہل بیت میں سے ہیں۔یہ فرماکران کواپنے اہل بیت میں شامل فرمالیا۔عقدمواخات (بھائی چارہ)میں حضورنبی کریم صلی اللہ علیہ والہ وسلم نے ان کوحضرت ابوالدرداءرضی اللہ تعالیٰ عنہ کابھائی بنادیاتھا۔(ترمذی ،جلددوم،مستدرک ،امام حاکم ،ج3،ص691)
حضرت انس رضی اللہ تعالیٰ عنہ بیان کرتے ہیں کہ”رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فر مایا”دین حق کے بارے میں سبقت لے جانے والے اور دوسروں سے آگے بڑ ھ جانے والے چار لوگ ہیں۔میں عرب والوں سے سبقت لے جانے والا ہوں،صہیب روم والوں سے ،سلمان فارس والوں سے اور بلال حبشہ والوں سے۔(المستد رک علی الصحیحین للحاکم،کتاب معرفة الصحابہ،ذکر بلال بن رباح،موذن رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم)
حضرت ابو بریدہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ:رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فر مایاکہ”بے شک اللہ تعالیٰ نے مجھے چار لوگوں سے محبت کرنے کاخصوصی حکم دیا ،اور مجھے یہ بھی بتایاگیاہے کہ اللہ پاک ان کودوست رکھتا ہے۔پوچھا گیا کہ”یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ،وہ کون کون ہیں؟آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے تین مر تبہ فر مایا کہ علی المرتضیٰ کرم اللہ وجہہ الکریم انہیں لوگو ں میں سے ہیں،اور ان کے علاوہ،ابوذر،سلمان اور مقدادرضی اللہ تعالیٰ عنہم ہیں۔(ابن ماجہ،باب فضائل اصحاب رسول ،فضل سلمان وابی ذر والمقداد رضی اللہ عنہم)
حضرت انس بن مالک رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فر مایاکہ”بے شک جنت تین لوگوں کی مشتاق ہے۔علی،عماراور سلمان رضی اللہ تعالیٰ عنہم(تر مذی،جلددوم کتاب المناقب،باب مناقب سلمان الفارسی رضی اللہ عنہ)
مدائن کی گورنری/زہدوتقویٰ
امیرالمومنین سیدناحضرت عمرفاروق رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے اپنے عہدسعید میں آپ کو مدائن کی گورنری کے عہدہ جلیلہ پر فائز کرکے پانچ ہزار روپیہ سالانہ وظیفہ مقرر کردیا تھا۔ جب آپ کو وظیفہ ملتا تو ا±سے فقراءاور محتاجوں میں تقسیم کردیتے اور خود زنبیل بانی سے گزارہ کرتے۔ آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کا کوئی گھر نہ تھا۔ دیواروں اور درختوں کے پتوں کے سایہ میں رہا کرتے تھے۔ ایک شخص نے عرض کیا کہ میں آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی رہائش کے لیے گھر بنا دیتا ہوں۔ آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے فرمایا کہ مجھے گھر کی ضرورت نہیں ہے۔ ا±س نے بااصرار کہا کہ جس قسم کا گھر آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی طبیعت کے موافق ہے وہ مجھے معلوم ہے۔ فرمایا” بیان کر، اس نے عرض کیا کہ میں آپ کے لیے ایسا گھر بنادیتا ہوں کہ جب آپ اس میں کھڑے ہوں تو سر مبارک اس کی چھت سے لگے اور جب پاو¿ں پھیلائیں تو پاو¿ں کی انگلیاں دیوار سے جالگیں، آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے فرمایا کہ درست ہے، چنانچہ اس نے ایسا ہی گھر تیار کردیا۔ بعض ناواقف لوگ آپ کی ظاہری حالت دیکھ کر آپ کو مزدور سمجھتے۔ ایام گورنری میں ایک دفعہ ایک شخص نے آپ کو مزدور سمجھ کر اپنا سامان اٹھوایا۔ راستے میں ایک شخص نے پوچھا اے امیر! آپ نے یہ بوجھ کیوں اٹھایا ہے۔ تب اس شخص نے بہت معذرت کی کہ مجھے معلوم نہ تھا اور اصرار کیا کہ سامان یہیں چھوڑ دیں لیکن آپ حسب وعدہ بوجھ اس کے مکان پر پہنچا کر ہی واپس لوٹے۔آپ کے پاس ایک دھاری دار کملی تھی جس کا کچھ حصہ اوڑھ لیتے اور کچھ نیچے بچھالیتے، گورنری جیسے عہدہ جلیلہ پر فائز ہونے پر بھی یہی کملی آپ کے پاس رہتی تھی۔ روایت ہے کہ ایک شخص نے آپ کو گالیاں دیں، آپ نے کہا کہ اگر قیامت کے دن میرے گناہوں کا پلہ بھاری ہوگیا تو تو جو کچھ کہتا ہے میں ا±س سے بھی بدتر ہوں اور اگر گناہوں کا پلہ ہلکا ہوگیا تو جو کچھ تو کہتا ہے مجھ کو ا±س سے کوئی ڈر اور خطرہ نہیں ہے۔
بعدازوصال حالت خواب میںآکرحالات بتانا
حضرت عبداللہ بن سلام رضی اللہ تعالیٰ عنہ فرماتے ہیں کہ ایک مرتبہ حضرت سلمان فارسی رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے مجھ سے فرمایاکہ اے عبداللہ بن سلام رضی اللہ تعالیٰ عنہ!آئیے ہم اورآپ یہ عہدکریں کہ ہم دونوں میں سے جوبھی پہلے وصال کرے وہ خواب میں آکراپناحال دوسرے کوبتادے۔حضرت عبداللہ بن سلام رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے کہاکہ کیاایساہوسکتاہے؟توحضرت سلمان فارسی رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے فرمایاکہ ہاں مومن کی روح آزادرہتی ہے ۔روئے زمین میں جہاں چاہے جاسکتی ہے ۔اس کے بعدحضرت سلمان فارسی رضی اللہ تعالیٰ عنہ کاوصا ل ہوگیا۔پھرمیں ایک دن قیلولہ کررہاتھاتوبالکل ہی اچانک حضرت سلمان فارسی رضی اللہ تعالیٰ عنہ میرے سامنے آگئے اوربلندآوازسے انہوں نے کہا”السلام علیکم ورحمة اللہ “میں نے جواب میں ”وعلیکم السلام ورحمة اللہ “کہااوران سے دریافت کیاکہ بتائے وصال کے بعدآپ پرکیاگزری؟اورآپ کس مرتبہ پرہیں؟توانہوں نے فرمایاکہ میں بہت ہی اچھے حال میں ہوں اورمیں آ پ کونصیحت کرتاہوں کہ آپ ہمیشہ اللہ جل جلالہ پرہمیشہ توکل کرتے رہیں ۔ کیونکہ توکل بہترین چیزہے ۔توکل بہترین چیزہے۔توکل بہترین چیزہے ۔اس جملہ کوانہوں نے تین مرتبہ ارشادفرمایا۔(شواہدالنبوة،ص221)
مومن کی وفات پرفرشتے کی نرمی
حضرت سلمہ بن عطیہ اسدی رحمةا للہ علیہ کابیان ہے کہ حضرت سلمان فارسی رضی اللہ تعالیٰ عنہ ایک مسلمان کے پاس اسکی عیادت کے لئے تشریف لے گئے اوروہ جاں کنی کے عالم میں تھا۔توآپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے فرمایاکہ اے فرشتہ!توا س کے ساتھ نرمی کر!راوی کہتے ہیں کہ اس مسلمان نے کہاکہ اے سلمان فارسی رضی اللہ تعالیٰ عنہ یہ فرشتہ آپ کے جواب میں کہتاہے کہ میں توہرمومن کے ساتھ نرمی ہی اختیارکرتاہوں۔(حلیة الاولیائ،ج1،ص204،حیاة الصحابہ ،جلد3،ص209)
فکرآخرت
حضرت سعدبن ابی وقاص رضی اللہ تعالیٰ عنہ اورحضرت عبداللہ بن مسعودرضی اللہ تعالیٰ عنہ مرض الموت کے وقت آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے گھربیمارپرسی کے لئے گئے تو آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ پر گھبراہٹ کے آثار دکھائی دیئے لوگوں نے پوچھا” اے عبداللہ کے باپ! آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کو کس چیزنے پریشان کردیا ہے ؟حالانکہ آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ تو بھلائی کے کاموں میں سبقت لے جانے والے تھے اورآپ تو رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ وسلم کے ساتھ کئی غزواتِ حسنہ اور بڑی بڑی فتوحات میں شریک رہے۔توآپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے فرمایا”مجھے یہ بات پریشان کئے ہوئے ہے کہ اللہ کے محبوب ،دانائے غیوب سرکارمدینہ صلی اللہ علیہ والہ وسلم نے ہم سے جدا ہوتے وقت ایک عہد لیا تھا کہ” تم میں سے ہرشخص کوایک مسافرجتنا زادِراہ کافی ہے۔“اوریہی وہ بات ہے جس نے مجھے پریشان کیاہے۔“جب آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کامال جمع کیاگیاتواس کی قیمت صرف15/20درہم کے برابرتھی۔(ابن ماجہ،جلد3،زہدکابیان،الترغیب والترہیب،کتاب التوبة الزہد)
وصال مبارک
جب آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے وصال کاوقت قریب آیاتوآپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے اپنی زوجہ محترمہ سے فرمایاکہ تم نے جوتھوڑاسامشک رکھاہے ۔اس کوپانی میں گھول کرمیرے سرمیں لگادو۔کیونکہ اس وقت میرے پاس کچھ ایسی ہستیاں تشریف لانے والی ہیں جونہ انسان ہیں اورنہ جن ۔آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی زوجہ محترمہ فرماتی ہیں کہ میں نے مشک کوپانی میں گھول کرآپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے سرمیں لگادیااورمیں جیسے ہی مکان سے باہرنکلی ۔گھرکے اندرسے آوازآئی ”السلام علیک یاولی اللہ، السلام علیک یاصاحب رسول اللہ “میں یہ آوازسن کرمکان کے اندرگئی توحضرت سلمان فارسی رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی روح مطہرہ پروازکرچکی تھی وہ اس طرح لیٹے ہوئے تھے کہ گویاگہری نیندسوررہے ہیں۔ابونعیم رحمة اللہ علیہ فرماتے ہیں کہ حضرت سلمان فارسی رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی عمربہت زیادہ ہوئی ۔بعض کاقول ہے تین سوپچاس برس کی عمرہوئی ۔اوردوسوپچاس برس کی عمرپرتمام مورخین کااتفاق ہے۔آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی وفات35ھجری میں ہوئی ۔جبکہ بعض مورخین کے نزدیک آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی وفات کاسال 10رجب المرجب سن33ھجری یاسن34ھجری ہے ۔آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کامزارمبارک مدائن میں زیارت گاہ خلائق ہے ۔(،ترمذی مناقب سلمان فارسی واکمال ،اسدالغابہ ج2،ص328،شواہدالنبوة ،ص221) اللہ تعالیٰ کی ان پررحمت ہواوران کے صدقے ہماری مغفرت ہو۔آمین بجاہ النبی الامین صلی اللہ علیہ والہ وسلم

Check Also

بعثت و نبوتﷺ پر ایمان کی معراج

بعثت و نبوتﷺ پر ایمان کی معراج تحریر۔۔۔ رشید احمد نعیم ، پتوکی حضور صلی ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *