Home / بزنس / حکومت کی معیشت کی بحالی کے لئے آئی ایم ایف پر انحصار کرنے کی بجائے دوست ممالک سے تجاتی معاہدوں اور نرم شرائط پر قرضوں کی بدولت ملک کو بحران سے نکالنے کی کوشیشیں قابل تعریف ہیں : پیاف

حکومت کی معیشت کی بحالی کے لئے آئی ایم ایف پر انحصار کرنے کی بجائے دوست ممالک سے تجاتی معاہدوں اور نرم شرائط پر قرضوں کی بدولت ملک کو بحران سے نکالنے کی کوشیشیں قابل تعریف ہیں : پیاف

 

 

حکومت کی معیشت کی بحالی کے لئے آئی ایم ایف پر انحصار کرنے کی بجائے دوست ممالک سے تجاتی معاہدوں اور نرم شرائط پر قرضوں کی بدولت ملک کو بحران سے نکالنے کی کوشیشیں قابل تعریف ہیں : پیاف
چین کی حکومت سے تجارتی معاہدوں میں اس بات کو یقینی بنایا جائے کہ لوکل اندسٹری متاثر نہ ہو۔چین اور پاکستان کی ڈالر کی بجائے مقامی کرنسی میں تجارت کی لین دین سے پاکستانی معیشت پر مثبت اثرات مرتب ہونگے اور روپے کی قدر میں بھی اضافہ ہو گا۔میاں نعمان کبیر ،ناصر حمید خان ،جاوید اقبال صدیقی
لاہور (پریس ریلیز(پاکستان انڈسٹریل اینڈ ٹریڈرز ایسوسی ایشنز فرنٹ (پیاف)نے کہا ہے کہ چین کی طرف سے پاکستانی تاجروں کو بزنس ویزوں میں نرمی اور ٹریڈ ویزوں کے طریقہ کار کو اسان بنانے سے چین کے ساتھ تجارتی سرگرمیوں میں اضافہ ہو گا۔ سی پیک روٹس پر چین کے تعاون سے صنعتی زونز کے قیام سے صنعتی ترقی کے ساتھ ساتھ روزگار کے لاکھوں مواقع پیدا ہونگے جس سے بیروزگاری کے خاتمے میں مدد ملے گی۔ چین اور پاکستان کی ڈالر کی بجائے مقامی کرنسی میں تجارت کی لین دین سے پاکستانی معیشت پر مثبت اثرات مرتب ہونگے اور روپے کی قدر میں بھی اضافہ ہو گا۔چین کی حکومت سے تجارتی معاہدوں میں اس بات کو یقینی بنایا جائے کہ لوکل اندسٹری متاثر نہ ہو۔ چیئرمین پیاف میاں نعمان کبیر نے سیئنر وائس چیئرمین ناصر حمید خان اور وائس چیئرمین جاوید اقبال صدیقی کے ہمراہ تاجروں کے وفود سے گفتگو کرتے ہوئے کہاتجارتی خسارہ کم کرنے کے لئے چین کے ساتھ تجارت از حد ضروری ہے ۔ چین کے ساتھ پاکستان کو تقریبا©© دس ارب ڈالر سے زائد تجارتی خسارے کا سامنا ہے جس کو کم کرنے کا واحد طریقہ چین کے ساتھ تجارت کا فروغ ہے۔پاکستان کے چین کے ساتھ تجارتی معاہدوں سے پاکستان کو اقتصادی بحران سے نکلنے اور تجارتی تعلقات ٹھوس بنیادوں پر استوار کرنے میںخوب مدد ملے گی۔وائس چیئرمین پیاف ناصر حمید خان نے کہاحکومت کی معیشت کی بحالی کے لئے آئی ایم ایف پر انحصار کرنے کی بجائے دوست ممالک سے تجاتی معاہدوں اور نرم شرائط پر قرضوں کی بدولت ملک کو بحران سے نکالنے کی کو شیشیں قابل تعریف ہیں۔ وزےراعظم عمران خاں کے پہلے دورہ چےن کے دوران آزمودہ دوست نے معاشی مشکلات سے نکالنے کی ہامی بھری ہے۔پاکستان اور چےن کا اےک دوسرے کی کرنسی مےں تجارت کا معاہدہ باہمی کرنسی کا حجم دوگنا کر دےا گیا ۔ تجارتی معاہدوں پر فوری علمدر آمد جبکہ پاکستان مےں غربت کے خاتمے کے لےے بڑا منصوبہ شروع کرنے کا فےصلہ کرپشن کے ناسور کو جڑ سے اکھاڑنے کے لےے چےن اعانت فراہم کرے گا، انہوں نے کہاچےن نے سی پےک کے تمام شعبوں مےں کام کی رفتار تےز جبکہ ضنعتی رونز کو ترجےحی بنےادوں پر کام کرنے کاغرم سعودی عرب اور چےن کے کامےاب دورں سے ملکی معیشت مظبوط بنیادوں پر استوار ہو گی۔انھوں نے مزید کہانے کہا کہ دونوں ممالک کے درمیان معاہدے سے روپے کی قدر مستحکم، زرمبادلہ کے ذخائر پر دباﺅ کم او ر تجارتی خسارہ میں کمی ہوگی۔ انہوںنے کہا کہ وزیراعظم عمران کی بطور مہمان خصوصی چائنہ انٹرنیشنل امپورٹ ایکسپو میں شرکت پاکستان کیلئے اعزاز ہے اس دورے کے دوران دونوں ممالک کے مابین 15نئے معاہدوںپر دستخط اہم معاشی پیش رفت ہے جس کے ملکی معیشت پردور رس نتائج برآمد ہونگے۔انہوںنے کہا کہ وزیراعظم کے دورہ چین کے دوران پاکستانی وفد سے چینی کمپنیوں نے مختلف شعبوں میں سرمایہ کاری کا عندیہ دیا ہے پاکستان میں سب سے زیادہ سرمایہ کاری چین ہی کی ہے اور اس میں مستقبل میں مزید اضافہ سے ملکی انڈسٹریز ترقی کرے گی کیونکہ چینی کمپنیوں کے پاس تجربہ اور پاکستان کے پاس وافر افرادی قوت ہے۔

Check Also

فرانس کے سابق تجارتی ایڈوائزر مائیکل سیکولیس کا اپنی مسزچانٹل کے ہمراہ چنیوٹ کا دورہ

فرانس کے سابق تجارتی ایڈوائزر مائیکل سیکولیس کا اپنی مسزچانٹل کے ہمراہ چنیوٹ کا دورہ ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *