تازہ ترین خبریں
Home / بزنس / غیرملکی سرمایہ کاری میں اضافہ کے لیے نئے تجارتی معاہدے کیے جائیں: خواجہ خاور رشید، ذیشان خلیل

غیرملکی سرمایہ کاری میں اضافہ کے لیے نئے تجارتی معاہدے کیے جائیں: خواجہ خاور رشید، ذیشان خلیل

 

غیرملکی سرمایہ کاری میں اضافہ کے لیے نئے تجارتی معاہدے کیے جائیں: خواجہ خاور رشید، ذیشان خلیل
لاہور، ( ) چیئرمین بورڈ آف انویسٹمنٹ نعیم وائی زمیندار نے کہا ہے کہ پاکستان کو غیرملکی و مقامی سرمایہ کاری کے لیے بہترین جگہ بنانے کے لیے ہرممکن اقدامات اٹھائے جارہے ہیں جبکہ لاہور چیمبر کے سینئر نائب صدر خواجہ خاور رشید اور نائب صدر ذیشان خلیل نے غیرملکی سرمایہ کاری کو بڑھانے کے لیے مزید معاہدوں کی ضرورت پر زور دیا ہے۔ لاہور چیمبر کے سینئر نائب صدر خواجہ خاور رشید اور نائب صدر ذیشان اور ایگزیکٹو کمیٹی ممبران سے ملاقات میں چیئرمین بورڈ آف انویسٹمنٹ نے کہا کہ غیرملکی سرمایہ کاری بتدریج بڑھ رہی ہے، رواں سال غیرملکی سرمایہ کاری کے لیے 3.7ارب ڈالر کا ہدف مقرر کیا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان غیرملکی اور مقامی سرمایہ کاری کے لیے بہترین جگہ ہے، چین پاکستان اکنامک کاریڈور کے تحت سپیشل اکنامک زونز پر خصوصی توجہ دی جارہی ہے، اگلے پچیس سالوں میں چین کی معیشت کا حجم 30ٹریلن ڈالر ہوجائے گا جس سے پاکستان بھرپور فائدہ اٹھاسکتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان میں پیداواری لاگت کم ہونی چاہیے تاکہ صنعتوں کو فائدہ ہو۔ لاہور چیمبر کے سینئر نائب صدر خواجہ خاور رشید اور نائب صدر ذیشان خلیل نے کہا کہ کاروباری برادری کو کم غیر ملکی سرمایہ کاری پر تشویش ہے۔ ترقی پذیر ممالک میں سرمایہ کاری جی ڈی پی کے 30فیصد کے مساوی ہونی چاہیے لیکن پاکستان میں یہ صرف 16فیصد ہے۔ انہوں نے کہا کہ 48 ممالک نے پاکستان کے ساتھ تجارتی معاہدوں پر دستخط کیے ہیں لیکن ان کی پاکستان میں سرمایہ کاری بہت کم ہے، بورڈ آف انویسٹمنٹ ان ممالک پر خصوصی توجہ دے۔ انہوں نے کہا کہ سپیشل اکنامک زون ایکٹ ستمبر 2012میں متعارف کرایا گیا تھا اور اس کے تحت غیرملکی سرمایہ کاروں کو جو رعائتیں دی گئی تھیں ان کے پیش نظر سرمایہ کاری میں جتنا اضافہ ہونا چاہیے تھا اتنا ہوا نہیں لہذا اس معاملے پر بھی توجہ دینے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ بین الاقوامی سطح پر پاکستان کی ساکھ کے متعلق منفی تاثرات نے سرمایہ کاری کو ب±ری طرح متاثر کیا ہے لہذا اس مسئلے کے ساتھ موثر انداز میں نمٹا جائے۔
سمگلنگ معیشت کے لیے بڑا خطرہ بن چکی ہے، سخت ایکشن کی ضرورت ہے: ملک طاہر جاوید
لاہور، ( ) لاہور چیمبر کے صدر ملک طاہر جاوید نے سمگلنگ کے خلاف انتہائی سخت ایکشن پر زور دیتے ہوئے کہا ہے کہ یہ مسئلہ فورا حل کرنا ضروری ہے کیونکہ اس کی وجہ سے مقامی صنعتوں ور قومی خزانے دونوں کو بھاری نقصان پہنچ رہا ہے۔ ایک بیان میں ملک طاہر جاوید نے کہا کہ سمگلنگ معیشت کے لیے بڑا خطرہ بن چکی ہے اور کوئی شعبہ بھی ایسا نہیں جو اس کے مضر اثرات سے محفوظ ہو۔ انہوں نے کہا کہ سمگلنگ ہماری معاشی نشوونما کے لیے بہت بڑا خطرہ بن چکی ہے، افغانستان، ایران، چین اور بھارت سے سمگل شدہ اشیاءایک سیلاب کی طرح آرہی ہیں ، چونکہ ان پر کوئی ڈیوٹی یا ٹیکس ادا نہیں کیا جاتا لہذا سستی ہونے کی وجہ سے صارفین انہیں مقامی اشیاءپر ترجیح دیتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ملک بھر کی مارکیٹیں سمگل شدہ اشیاءسے بھری پڑی ہیں جس کی وجہ سے مقامی صنعتیں اپنی بقاءکی جنگ لڑ رہی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ افغان ٹرانزٹ ٹریڈ کا بھی بہت غلط استعمال ہورہا ہے اور اس معاہدے کے تحت آنے والی اشیاءکا ایک بڑا حصہ غیر قانونی طور پاکستان میں ہی کھپا دیا جاتا ہے، اگر حکومت نے سمگلنگ کی روک تھام کے لیے فوری اور سخت اقدامات نہ اٹھائے تو صورتحال مزید خراب ہوجائے گی۔ انہوں نے کہا کہ ڈیوٹیوں اور ٹیکسوں کی زیادہ شرح سمگلنگ کی حوصلہ افزائی کا باعث بن رہی ہے لہذا حکومت ا±ن اشیاءپر ڈیوٹیاں اور ٹیکس کم کرے جو سمگلنگ کے لیے کشش رکھتی ہیں۔ لاہور چیمبر کے صدر نے کہا کہ سمگلروں کے ساتھ آہنی ہاتھوں سے نمٹنا اور انہیں سخت سزا دینا بہت ضروری ہے کیونکہ یہ اپنے ذاتی فائدے کے لیے قومی مفادات کو داﺅ پر لگارہے ہیں۔

Check Also

پی آئی اے نے برسوں سے رائج امریکن سسٹم سیبر کو خیر باد کہہ دیا

کراچی:  پی آئی اے انتظامیہ نے برسوں سے رائج امریکن ایئرٹکٹنگ، بورڈنگ اور ریزرویشن سسٹم ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *