Home / کالم / محرم ا لحرام کی ا ہمیت اور شہا دت نو ا سہ ر سو ل

محرم ا لحرام کی ا ہمیت اور شہا دت نو ا سہ ر سو ل

 

 


محرم ا لحرام کی ا ہمیت اور شہا دت نو ا سہ ر سو ل
تحر یر۔۔۔ ڈاکٹرعبدا لمجید چو ہد ر ی
محر م ا سلا می تقو یم کا پہلا مہینہ ہے اسے محر م ا لحرا م بھی کہتے ہیں اسلا م سے پہلے بھی اس مہینے کوا نتہا ئی قابل ا حتر ا م سمجھا جا تا تھا ا سلا م نے یہ ا حتر ا م جا ر ی ر کھا ا س مہینے میں جنگ و جد ل منع ہے اسی حر مت کی و جہ سے ا سے محر م کہا جا تا ہے ا س مہینے سے نئے ا سلا می سا ل کا آ غا ز ہو تا ہے ا سی ما ہ میں یو م عا شو رہ ہے تا ر یخ کے عظیم وا قعا ت اس سے جڑے ہو ئے ہیں مو ر خین نے لکھا ہے اسی دن ہی آسما ن و زمین ، قلم اور حضرت آ دم علیہ ا لسلام کو پید ا کیا گیا اسی دن حضر ت آ دم علیہ ا لسلا م کی تو بہ قبو ل ہو ئی اسی دن حضر ت ادر یس کو آ سما ن پہ ا ٹھا یا گیا اسی د ن حضر ت نو ح علیہ ا لسلا م کی کشتی ہو لنا ک سیلا ب سے محفو ظ ہو کرجو دی پہا ڑپر لنگر ا نداز ہو ئی اسی دن حضر ت ا بر ھیم علیہ ا لسلا م کو خلیل ا للہ کا لقب ملا اور ا ن پر آ گ گل گلزار ہو گئی اسی دن حضر ت ا سما عیل علیہ ا لسلا م کی پید ا ئش ہو ئی اسی دن حضر ت یو سف علیہ ا لسلا م کو قید سے ر ہا ئی ملی اور مصر کی حکو مت ملی اسی دن حضر ت یو سف علیہ ا لسلا م کی طو یل مد ت کے بعد حضر ت یعقوب علیہالسلا م سے ملا قا ت ہو ئی اسی دن حضر ت مو سی علیہا لسلا م اور ا ن کی قو م بنی ا سر ا ئیل کو فر عو ن کے ظلم و ا ستبداد سے نجا ت ملی اسی د ن حضرت مو سی علیہ ا لسلا م پر تو ریت نا ز ل ہو ئی اسی دن حضر ت سلیما ن علیہ السلا م کو با د شا ہت وا پس ملی اسی دن حضر ت ا یو ب علیہ ا لسلا م کو سخت بیما ر ی سے شفا ملی اسی د ن حضر ت یو نس علیہ ا لسلا م چا لیس روز مچھلی کے پیٹ میں رہنے کے بعد نکلے گئے اسوی دن حضر ت یو نس علیہ ا لسلا م کی قو م کی تو بہ قبو ل ہو ئی اور ا ن سے عذا ب ٹلا اسی دن حضر ت عیسی علیہ ا لسلا م کی پید ا ئش ہو ئی اسی دن حضر ت عیسی علیہ ا لسلام کو یہو دیو ں کے شر سے نجا ت د لا کر آ سما ن پہ ا ٹھا یا گیا اسی د ن د نیا میں پہلی باران ر حمت نا ز ل ہو ئی اسی دن قر یش خا نہ کعبہ پہ غلا ف ڈا لتے تھے اسی د ن آقا جی سید نا محمدصلی ا للہ علیہ وسلم نے حضر ت خد یجہ سے نکا ح فر ما یا اور اسی دن قیا مت قا ئم ہو گی اور اسی دن کو فی فر یب کا رو ں نے نو ا سہ ر سو ل صلی ا للہ علیہ و سلم اور جگر گو شہ بتو ل فا طمہ ر ضی اللہ عنہما کو میدا ن کر بلا میں شہید کیا۔ یکم محرم الحرام کو خلیفہ دوئم سیدنا عمر فاروق رضی اللہ عنہ پیدا ہوئے دنیانے سینکڑو ں دلدوزمنا ظر اور رو ح فر سا وا قعا ت د یکھے ہو ں گے رنج و غم کی دا ستا نیں سنی ہو گی غمگسا ر و ں کے حا لا ت اور ما تم کر نے وا لو ں کے آ نسو ﺅںکے در یا بہتے د یکھے ہو ں گے لیکن تا ر یخ کے کسی دور میں میں د نیا کے کسی ا لمنا ک حا د ثہ پر نسل ا نسا نی نے ا س قدر آ نسو نہ بہا ئے ہو ں گے جس قد ر د ا ستا ن کر بلا میںشہا دت حسین پر حضر ا ما م حسین ر ضی ا للہ تین شعبا ن چا ر ھ مطا بق 8جنو ر ی 626ءپیر کے دن پید ہو ئے آپ کی وا لدہ جگر گو شہ رسول صلی ا للہ علیہ وسلم تھیں آپ کے وا لد حضر ت علی شیر خدااور آ پ کے نا نا سر ور کو نین فخر دو عا لم حضر ت محمد صلی ا للہ علیہ و سلم حضو ر صلی ا للہ علیہ وسلم کے قلب مبا ر ک میںا ما م حسین کی خصو صی محبت و د یعت کی گئی تھی 61ھ میںبد قسمتی سے د نیا جبر و ظلم کے گٹا ٹو پ ا ند ھیر و ں میں گھر گئی تھی آزا د ی اور حر یت کی جگہ شخصیت پر ستی نے اور نظا م شو روی کی جگہ ڈکٹیٹر شپ نے لے لی تھی جمہو ر یت کا جنا ز ہ نکلنے لگاتھا ۔ وہ مسند خلا فت جس پر حضر ت صحا بہ کر ا م میں سے حضر ت ا بو بکر صد یق رضی ا للہ تعا لی عنہ حضر ت عمر فا رو ق رضی ا للہ تعا لی عنہ حضر ت عثما ن غنی ر ضی اللہ اور شیر خدا حضر ت علی ر ضی ا للہ تعا لی عنہ جیسے خلفا ءمتمکن تھے اس پر یزیدجیسا ظا لم و جا بر با د شا ہ بیٹھ گیا تھا ا س نے ا سلا م کے نو را نی چہر ے پر نفس پر ستی اور خو د غر ضی کے جالے تا ن دیے تھے یہ وہ حا لا ت تھے جن کو د یکھ کر سید نا ا ما م حسین ر ضی ا للہ بے چین ہو گئے حمیت و غیر ت نے گو را ہ نہ کیا کہ ہما ر ے جیتے جی نا نا جا ن کا دین مٹ جا ئے آپ کلمہ حق کا جھنڈا بلند کر نے ،ا نصا ف اور سچا ئی کا بو ل با لا کر نے ، جمہو ر یت اور آ زا دی ر ا ئے کا پر چم پھیلا نے کے لئے خا ند ا ن سمیت مید ا ن میں کو د پڑ ے۔ یز ید اور ا س کی حر کا ت یکا پیر و چا ہتا تھا کہا ا سلا م کا شو را ئی نظا م ا ما م حسین کے نا م پر ا سلا م سے خا ر ج ہو جا ئے اس کے ا فسر ا ننے دو لت و حکو مت کا لا لچ د یا جا ن و ما ل کا خو ف د لا یا لیکن ا ما م حسین رضی ا للہ حق کی ر ا ہ سے نہ ہٹے اور خد ا کی مر ضی کی مر ضی پر ر ا ضی بر ضا ر ہے اور ا پنے مسلک پر چٹا نو ں کی طر ح قا ئم ر ہے آپ نے جنگ و جد ا ل سے بچنے کی ہر چند کو شش کی مگر یز ید ی فو ج نے یز ید کی بیعت کے سو ا اور کو ئی شر ط منظو ر نہ کی اور10 محر م 61ھ مطا بق 10ستمبر681ءکو با لآخر حق با طل کی وہ جنگ چھڑگئی جس پر ا نسا نیت ر ہتی د نیا تک حسر ت و ا فسو س کے آ نسو بہا تی ر ہے گی حضر ت سید نا ا ما م حسین کی شہا د ت تا ر یخ عا لم کا و ہ درد نا ک و ا قعہ ہے کہ جو ا یک ا بد ی ز ند گی اور آ نے وا لی نسلو ں کے لئے سبق آ مو ز ہے ا یسے نا زک وقت میں جب کہ آ پ کے یا رو مد د گا ر خو ن میں لت پت تھے آ پ صبر کا پہا ڑ بن کر ا للہ کی جا نب متو جہ ر ہے ۔بے شک سید نا ا ما م حسین کے جسم کو تیر و ں نے چھلنی کر دیا تلو ا ر نے سر تن سے جد ا کر دیا لیکن آ پ کا نا م آ ج بھی د لو ں کو گر ما نے اور تا ر یک ر ہو ں کو ر وشن کر نے کے لئے ا یک مثا ل ہے سید نا ا ما م حسین نے حق کے لئے را ستی کے لئے شر یعت کی حفا ظت کے لئے ا نسا نیت کا بھر م ر کھنے کے لئے اور قو م کی تر قی کے لئے ہر چیز ا للہ کی راہ میں قر با ن کر دی اور سر تھا تو اس کو بھی حق کے لئے کٹا د یا ۔ ہر گزکسی رو ح کے لئے جا ئزنہیں کہ و ہ محبت سید نا حسین کا د عو ید ا ر ہو اور ان کے ا عما ل سیر ت حسینی کے مطا بق نہ ہو ں ۔

Check Also

مطالعہ جامع ترمذی شریف

      مشرقی اُفق میر افسر امان مطالعہ جامع ترمذی شریف صحاح ستہ حدیث ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *