Home / کالم / کرپٹ مافیاکی چیخیں ۔۔؟

کرپٹ مافیاکی چیخیں ۔۔؟

 

 

کرپٹ مافیاکی چیخیں ۔۔؟
عمرفاروق /آگہی
ابھی چنددن ہی ہوئے ہیں کہ وزیراعظم پاکستان عمران خان نے قوم سے پہلے خطاب میںدواہم اعلانات کیے تھے کہ پہلایہ کہ یا یہ ملک رہے گا یا یہ کرپٹ لوگ رہیں گے اور جب ہم یہ کریں گے تو یہ سب چیخیں گے اس لیے آپ نے ساتھ دینا ہے،وزیراعظم نے دوسرااعلان کرتے ہوئے کہاتھا کہ سادگی اورکفایت شعاری سے کام لیں گے ۔ان الفاظوں کی گونج ابھی ختم نہیں ہوئی تھی کہ نئے پاکستان کے وزیراعظم اوران کی ٹیم نے ان اعلانات کی دھجیاں بکھیردی ہیں یہ پہلی حکومت ہے کہ جوپہلے عشرے میں ہی بوکھلاگئی ہے اوراس کے اقدامات کے خلاف بھرپورردعمل سامنے آیاہے ۔
جہاں تک کرپٹ لوگوں کے خلاف کاروائی کی بات ہے توابھی تک جواقدامات کیے گئے ہیں ان میں احتساب کی بجائے سیاسی انتقام زیادہ ہے ایک طرف آپ کرپٹ لوگوں کے خلاف احتساب کی بات کررہے تودوسری طرف نیب زدہ لوگ کابینہ میں شامل کررہے ہیں وفاقی کابینہ کی بات کریں تواس میں جہاں نئے چہروں کی بجائے وہی پرانے چہرے لائے گئے ہیں وہاں ایسے لوگوں کوسامنے لایاگیاہے جن پرکرپشن کے الزامات ہیں اوربعض نیب کی پیشیاں بھگت رہے ہیں،سپریم کورٹ کہہ رہی ہے کہ مشرف کے اثاثے اس کی آمدن سے زائدہیں اورآپ نے مشرف کے وکیل بیرسٹرفروغ نسیم کووزیرقانون بنادیا۔ شاہ محمود قریشی پیپلزپارٹی کے وزیر خارجہ رہے ہیں جن پر اپنے دوست کو گشتی سفیر کا عہدہ دے کر 50 ملکوں کے دورے کرانے کا الزام ہے۔ؒعبدالرزاق داﺅدمشرف دور میں وزیر تجارت رہ چکے ہیں جن پر سنگین بے قاعدگیوں کے الزامات ہیں۔ بابر اعوان پر نندی پور پاور پراجیکٹ میں سنگین بدعنوانی کا الزام ہے اور نیب میں بھی طلب کیے جا چکے ہیں۔
فہمیدہ مرزاجب سپیکربنیں تو انہوں نے پانچ برسوں میں مختلف بینکوں سے چوراسی کروڑ روپے کا قرضہ معاف کرایا۔ اپنے امریکہ میں علاج پر تیس لاکھ روپے بھی اسمبلی کے بجٹ سے خرچ کیے۔ سپیکرشپ کے آخری روز مراعات کا ایک پیکیج اپنے لیے تاحیات خود منظور کیا۔آپ کابنک لوٹنے والوں کونہیں چھوڑنے کادعوی کیاہوا؟
اسی طرح ایم کیو ایم کے خالد مقبول صدیقی پر الطاف حسین کو چھ ارب روپے کی منی لانڈرنگ کے الزامات کی ایف آئی اے تحقیقات کر رہی ہے۔ وہ بھی وزیربن گئے ہیںمنی لانڈرنگ کرنے والوں کی چیخیں تونہیں البتہ ان کووزارتیں ملنے کے بعدقہقے سنائی دے رہے ہیں ۔
ؒؒؒزبیدہ جلال کوجب پرویزمشرف دورمیں وزیربنایاگیاتوانہوں نے توانا پاکستان۔ بلوچستان کے سکول جاتے بچوں کے لیے ایک پروجیکٹ شروع کیا گیا جس کے مطابق بچوں کو سکول میں دودھ بسکٹ دیے جانے تھے اور ساتھ میں والدین کی حوصلہ افزائی کی جانی تھی کہ وہ بچوں کو سکول بھیجیں۔مگرکیاہواکہ انہوں نے اس تواناپاکستان سے اپنے آپ کوتواناکیا ان پرکرپشن کے الزامات لگے اس وقت کے سینیٹر انور بیگ کو انکوائری رپورٹ کے مطابق زبیدہ جلال نے بلوچستان کے بچوں کے دودھ بسکٹ کے لئے مختص فنڈز اپنی رہائش گاہ کی آرائش پر خرچ کر دیے تھے۔ وزیراعظم معائنہ کمیشن رپورٹ میں زبیدہ جلال پر توانا پاکستان سکینڈل کے مرکزی ملزم عرفان اللہ خان کی پشت پناہی کا الزام تھا۔ عرفان اللہ کو اس پروجیکٹ سے علیحدہ کیا گیا تو زبیدہ جلال نے دوسرا پروجیکٹ دلوا دیا۔ توانا پاکستان سکینڈل میں کمپنیوں کو غیرقانونی ادائیگیاں کی گئیں۔ اکتوبر دو ہزار آٹھ میں سینیٹ کی کمیٹی کی جانب سے سفارش کی گئی کہ توانا پاکستان سکینڈل میں زبیدہ جلال کے کردار پر تحقیقات کی جائیں۔ انکوائری سے پتہ چلا کہ زبیدہ جلال اور عرفان اللہ پر توانا پاکستان فنڈز سے ملائیشیا میں کاروبار کرنے کا الزام بھی تھا۔ انور بیگ کی رپورٹ میں اور بھی متعدد اہم انکشافات کیے گئے تھے۔نیب نے چھوٹے ملزموں کوگرفتارکیا اور2008میں آصف علی زرداری نے انہیں نیب سے بچایایہ وہ احتساب ہے کہ جس کے خلاف آپ نے کہاتھا کہ گھرسے شروع کروں گا ؟۔
یہ تووفاقی کابینہ تھی پنچاب میں بھی صورتحال اسی قسم کی ہے کہ کرپٹ لوگوں کووزارتیں دے کران کی ،،چیخیں ،،سننے کے لیے کان صاف کروائے جارہے ہیں ، وزیراعلی پنجاب عثمان بزدار پر قتل اور کرپشن کے مقدمات تھے ،پنچاب کاسپیکرپرویزالہی کوبنایاگیا حالانکہ ان پرنیب کے متعددمقدمات چل رہے ہیں اس کے ساتھ ساتھ پارٹی کے لیے قربانیاں دینے والے کئی اراکین اسمبلی کو نظر انداز کر کے نئے آنے والوں کو نواز ا گیا۔ پرویز مشرف کو وردی میں صدر منتخب کرانے کیلئے پنجاب اسمبلی میں قرارداد پیش کرنے والے محمد بشارت راجہ کو نہ صرف پنجاب کی نئی کابینہ میں شامل کیا گیا ہے بلکہ انہیں قانون و پارلیمانی امور کی پہلے والی وزارت ہی مل گئی ہے ۔
پنجاب کے سینئر وزیر عبدا لعلیم خان ان پر نیب میں متعدد انکوائریز بھی چل رہی ہیں اور ان کے خلاف اربوں مالیت کا ای او بی آئی کیس سپریم کورٹ میں زیر سماعت ہے ۔ جس وجہ سے ان کا نام وزارت اعلی سے ڈراپ کیا گیا مگر اب انہیں بلدیات کی سب سے اہم وزارت دے دی گئی ہے ۔وزیر ہائر ایجوکیشن راجہ یاسر ہمایوں ادویات کے ایک کیس میں سزا یافتہ ہیں اور لاہور ہائیکورٹ میں ان کے خلاف کیس بھی زیر سماعت ہے ۔ لاہور سے میاں اسلم اقبال ،راجن پور سے حسنین بہادر دریشک ، اٹک سے ملک محمد انور اور فیصل آباد سے چودھری ظہیر الدین بھی مشرف دور میں پرویز الہی کی کابینہ کا حصہ رہے ہیں ۔ مخدوم ہاشم جواں بخت ،محسن لغاری اور نعمان لنگڑیال کا خاندان بھی مشرف دور میں حکومت کا حصہ رہا ہے۔یہ ہے وہ ٹیم جوکرپشن اورکرپٹ مافیاکے خلاف اقدامات کرے گی ؟وزیراعظم صاحب آپ جب اپوزیشن میں تھے توآپ مطالبہ کرتے تھے کہ سابق وزیراعظم یاوزیرکے خلاف نیب ایکشن لیتی توآپ مطالبہ کرتے تھے کہ انکوائری مکمل ہونے تک تک عہدے سے الگ ہوجائیں اب آپ میں یہ کیاتبدیلی آئی ہے کہ آپ کے وزاراءکے خلاف نیب میں مقدمات چل رہے ہیں اورآپ انہیں وزارتوں اوراعلی عہدوں سے نوازرہے ہیں ۔یہ کس قسم کی چیخیں ہیں جوعوام کوآپ سنارہے ہیں ایسی چیخیں توسابقہ حکومتوں نے بھی نہیں سنائیں ۔
نئے پاکستان کے کابینہ کے پہلے اجلاس میں نوازشریف اوران کے خاندان کانام ای سی ایل میں ڈالنے کی منظوری دی مگراپنے دوست زلفی بخاری کانام ای سی ایل میں نہیں ڈالا،پرویزمشرف کوواپس لانے اورغداری کامقدمہ چلانے پرکوئی بات نہیں کی یہ احتساب ہے یاسیاسی انتقام ؟
آپ نے جواحتساب شروع کیاہے اس کی مثال توکہیں نہیں ملتی ،آپ کی اہلیہ کے سابق شوہرکوروکناڈی پی اوکومہنگاپڑگیا پنجاب کے وزیراعلی نے مبینہ طور پر ڈی پی او رضوان گوندل کو طلب کیا انہیں خاور مانیکا کے پاس جا کر ان سے معافی مانگنے کیلئے کہا۔ ڈی پی او نے انکار کیا جس پر انہیں عہدے سے ہٹا دیا گیا۔
آپ نے ڈاکٹر امیر جوگیزئی کوبلوچستان کاگورنربنانے کی کوشش کی جس پرمیڈیامیں شورمچاکہ ڈاکٹرامیرجوگیزئی پر کڈنی سینٹر کوئٹہ کے لئے طبی آلات، سامان کی خریداری کے فنڈز میں خرد برد کا الزام ہے، ڈاکٹر امیر جوگیزئی کےخلاف 2015میں نیب نے انکوائری کی منظوری دی تھی ۔
جہاں تک سادگی کی بات ہے وزیراعظم ہاﺅس سے بنی گالہ کے درمیا ن چلنے والاہیلی کاپٹرتوایک طرف رہا کل پنجاب کے وزیراعلی اپنی فیملی کو ہیلی کاپٹر میں بٹھا کر اپنے سسر سے ملاقات کیلئے میاں چنوں تشریف لے گئے ۔ان کے استقبال کیلئے پروٹوکول کی گاڑیاں لاہور سے گئی تھیں اور گزشتہ روزسندھ کے نئے گورنر عمران اسماعیل نے کوئٹہ میں کمال کر دیایہ یار محمد رند کے عشائیے میں شرکت کیلئے کوئٹہ گئے اور ان کے پروٹوکول میں 27 گاڑیاں تھیں کوئٹہ کے ایک عام شہری نے اس استقبال کی موبائل فوٹیج بنائی جس میں پروٹوکول کی گاڑیاں بھی ہیں اور سڑکیں بھی بند ہیں اور یہ اس پارٹی کے گورنر ہیں جو اس ملک میں تبدیلی لانا چاہتی تھی۔

Check Also

شاعر مشرق علامہ محمد اقبال

﴾شاعر مشرق علامہ محمد اقبال﴿ رضوان اللہ پشاوری rizwan.peshawarii@gmail.com علامہ محمد اقبال دنیا میں ایک ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *