Home / کالم / ربیع الاول

ربیع الاول

ربیع الاول

کالم : بزمِ درویش تحریر:پروفیسر محمد عبداللہ بھٹی
ای میل: help@noorekhuda.org
ربیع الاول کے لغوی معنی پہلی بہار کے ہیں اِس ماہ کو تاریخ ِ انسانی میں خاص مقام حاصل ہے اِسی مہینے میں محسن انسانیت سرورِ دو عالم محبوب خدا ﷺ کی ولادت با سعادت ہو ئی ربیع الاول ہجری سال کا اہم سنگِ میل اور تاریخ عالم میں نمایاں اور کلیدی مقام رکھتا ہے یہ وہ با برکت اور بہار آفرین مہینہ ہے جس کی آمد سے چمنستان دہر کی مرجھائی ہو ئی کلیاں کھل اٹھیں خزاں رسیدہ گلستان سر سبز ، شاداب ہو گئے ۔اِسی ماہ میں نسلِ انسانی کے سب سے بڑے انسان جن پر انسانیت کو فخر ہے صدیوں سے دکھی تڑپتی سسکتی انسانیت جس مسیحا اعظم کے انتظار میں تھی وہ چاند اِسی ماہ حضرت آمنہ کے آنگن میں اِس شان اور تابناکی سے چمکا کہ کرہ ارض کا چپہ چپہ تو حید کے نور سے جگمگا اٹھا ماہ ربیع الاول کو جو غیر معمولی تقدس عظمت اور شان ملی ہے اس کی وجہ فخرِ دو عالم ، شافع محشر سرور کا ئنات سرور دو جہاں حادی عالم ، ساقی کو ثر ، سرور کونین ، فخرِ مو جودات صاحبِ لو ح و قلم نیرِ اعظم سیدِ عرب و عجم صبح درخشاں شاہِ امم محبوب رب العالمین سید المرسلین سرتاج الانبیا بشیر و نذیر سراج منیر امام الانبیا آفتاب دو عالم ﷺ کا اِس ماہ میں حضرت آمنہ کے آنگن میں چاند بن کر طلوع ہو نا ہے ایسا چاند جو پہلے دن سے آج تک اور روزِ محشر تک غروب نہ ہو گا۔ جس کی چمک کو کبھی بھی اندیشہ زوال نہیں وہ عظیم مسیحا کہ جس کے قدموں سے اٹھنے والی خاک کے ذرے جس پر پڑ گئے وہ قیامت تک امر ہو گئے اِس ماہ سرور دو عالم ﷺ کا صرف ظہور ِ قدسی نہیں ہوا بلکہ عالم نو طلوع ہوا تاریخ عالم نے نئے سفر کا آغا ز کیا اِسی ماہ میں حضرت آمنہ نے سعادت مند بیٹے کو جنم ہی نہیں دیا بلکہ ماد ر گیتی نے تاریخ ساز اور بے مثال انقلاب کو جنم دیا ۔ حضرت آمنہ شادی کے بعد جب کا شانہ اقدس حضرت عبداللہ اپنے خاوند کے رونق افروز ہوئیں تو نو ر محمدی ؓ حضرت عبداللہ کی جبیں سعادت سے حضرت آمنہ کے شکم ظاہر میں ظہور پذیر ہوا ۔ یہاں بھی نور محمدی ؓ کے جلوے نرالے تھے ۔ حضرت آمنہ فرماتی مجھے پتہ ہی نہیں چلا کہ میں حاملہ ہو گئی نہ مجھے بوجھ کا احساس ہوا ۔ جو اِن حالات میں دوسری عورتوں کو محسوس ہو تا ہے مجھے صرف اتنا معلوم ہوا کہ ایام ماہواری بند ہو گئے ہیں ۔ ایک روز میں خواب اور بیداری کے بین بین تھی کہ کو ئی آنے والا میرے پاس آیا اور پو چھا تجھے علم ہے کہ تو حاملہ ہے ؟ میں نے جواب دیا نہیں پھر اس نے بتایا تم حاملہ ہو اور تیرے بطن میں امت کا سردار اور نبی تشریف فرما ہوا ہے اور جس دن یہ واقعہ پیش آیا وہ سوموار کا دن تھا ۔ آپ فرماتی ہیں کہ حمل کے ایام بڑے آرام سے گزرے جب وقت پورا ہو گیا تو وہی فرشتہ جس نے مجھے پہلے خو شخبری دی تھی وہ آیا اور آکر مجھے کہا ترجمہ : یہ کہو میں اللہ واحد کی اِس کے لیے ہر حاسد کے شر سے پناہ مانگتی ہو ں ۔ اور پھر دو شنبہ کا دن اور صبح صادق کی ضیا بار گھڑی تھی سیا ہ رات کی سیاہی چھٹ رہی تھی دن کا اجالا پھیل رہا تھا جب آفتاب عالم سرور دو عالم مالک ِ دو جہاں آقائے دو جہاں حضرت محمد مصطفی ﷺ کی ولادت با سعادت سے کائنات کے بے نو ر گو شے چمک اٹھے آپ ﷺ کی ولادت سے ابدی مسرتوں کا نو رچمکا صدیوں کی کثافت لطافت میں بدلی ایمان اور رشد و ہدایت کی ایسی بہار کا آغاز ہوا جس کو کبھی خزاں نہیں ایسی بہار جو ظلم و جبر اور جہالت کے اندھیروں میں غرق انسانیت کو حیات ِ جاودانی عطا کر گئی ۔ بقول میاں محبوب احمد اِس کائنات رنگ و بو میں بہت ساری بہاریں مہکیں اور خزاں کا شکار ہو گئیں بہت سے سورج ابھرے اور فنا کے گھاٹ اتر گئے بہت سے چاند چمکے اور پھر گہن گئے بہت سے پھول کھلے اور مرجھا گئے ہاں ایک بہار ایسی کہ جسے جان ِ بہاران کہیئے خزاں اس کے کبھی قریب نہ آسکی ایک سراج ِ منیر ﷺ ایسا کہ غروب کی سیاہیاں اس سے آنکھیں نہ ملا سکیں ۔طلعت و زیبا ئی کا ایسا پیکر کہ کو ئی دھند اس کے جلوں کو گہنا نہ سکی ایسا رشک ِ گلستان کہ جس کے تلوں کو چوم لینے کا شرف رکھنے والی پیشانیاں بھی مرجھانے سے محفوظ رہیں وہ جان بہاراں سراج ِ منیر بدر فلک ِ رسالت فخر ِ گلزار نبوت ہمارے آقا ہمارے مو لی ہمارے حادی ہمارے راہبر حضرت محمد ﷺ ہیں جو ہر مومن کی نظر کا نور روح کا قرار اور دل کا سرور ہیں اور معروف سیرت نگار مولانا شبلی نعمانی نے اپنی عقیدت کا اظہار کر تے ہو ئے پھولوں اور ہیرے جواہرات جیسے الفاظ جو عشق ِ رسو ل ﷺ میں لپٹے ہو ئے نظر آتے ہیں بارگاہِ رسالت ﷺ میں پیش کئے ہیں ۔ آپ کا انداز تحریر ملاحظہ فرمائیں چمنستان دہر میں بار ہا روح پرور بہا ریں آچکی ہیں چرخ نادرہ کار نے کبھی کبھی بزمِ عالم اِس شان سے سجائی کہ نگاہیں خیرہ ہو کر رہ گئیں لیکن آج کی تاریخ ہے جس کے انتظار میں پیر کہن سال دہر نے کروڑوں برس صرف کئے سیارہ گان فلک اِسی دن کے انتظار میں ازل سے چشم براہ تھے چرخ کہن مدت ہا ئے دراز سے اسی صبح جان نواز کے لیل و نہار کی کروٹیں بدل رہا تھا کارکنان قضہ قدر کی بزم آرائیاں عناصر کی حدت طرازیاں ، مہہ و خورشید کی فروغ انگیزیاں ابر و بار کی تر دسیاں ، عالم اقدس کے انفاس پاک ، توحید ابراہیم ، جمال ِ یوسف معجز طرازلی مو سی ، اِسی لیے تھی کہ یہ متاع ہا ئے گراں بہا تا جدار عرب و عجم کے دربار گہر بار میں کا م آئیں گی ۔ آج کی صبح و ہ صبح جہاں نواز وہ ساعت ہمایوں وہ دور فرخ فال ہے کہ آج توحید کا غلغلہ بلند ہوا ۔ بت کدوں میں خاک اڑنے لگی نفرت و کدورت کے اوراق خزاں دیدہ ایک ایک کر کے جھڑنے لگے ، محبت اوراخوت کے پھول مہک اٹھے چمنستان سعادت میں بہار آگئی شبستان حیات جگمگا اٹھی اخلاق ِ انسانی کا آئینہ پر تو قدس سے چمک اٹھا ابراہیم کی دعا قبول ہو ئی نطق عیسی کی تبشیر وجو دمیں آئی کبھی نہ غروب ہو نے والا آفتاب افق سے نکلا جمعیت خاطر اور اطمینان قلب کے لیے ٹھوس عقیدے اور جا مع نظام و دستور کی کمی پو ری ہو گئی ۔ اِس رات ایوان ِکسری کے چودہ کنکرے گر گئے آتش کدہ فارس بجھ گیا دریائے سا وہ خشک ہو گیا لیکن سچ یہ ہے کہ ایوان ِ کسری ہی نہیں بلکہ شانِ عجم شوکت روم اوج ِ چین کے قصر ہا ئے فلک بوس گِر پڑے آتش کدہ فارس ہی نہیں بلکہ آتش کدہ کفر آزر کدہ گمراہی سرد ہو کر رہ گئے صنم خانوں میں خاک اڑنے لگی لت کدے خاک میں مل گئے شیرازہ مجوسیت بکھر گیا نصرانیت کے اوراق خزاں دیدہ ایک ایک کر کے جھڑ گئے توحید کا غلغلہ اٹھا چمنستان سعادت میں بہار آگئی ہدایت کی شعاعیں ہر طرف پھیل گئیں اخلاق انسانی کا پر تو قدس چمک اٹھا یعنی یتیم عبداللہ جگر گو شہ آمنہ شاہِ حرم حکمران عرب فرماں روائے عالم شہنشاہ کو نین ﷺ عالم قدس سے عالم امکاں میں تشریف فرما ہو ئے (شبلی نعمانی سیرت النبی ) حضرت آمنہ فرماتی ہیں جس رات مسیحا کا ئنات کی ولادت با سعادت ہو ئی میں نے ایک نور دیکھا جس کی روشنی سے شام کے محلا ت جگمگا اٹھے یہاں تک کہ میں ان کو دیکھ رہی تھی۔ دوسری روا یت میں ہے جب پیارے آقا ﷺ کی ولادت با سعادت ہو ئی حضرت آمنہ سے ایک نو رنکلا جس نے سارے گھر کو بقعہ نور بنا دیا ہر طرف نو ر ہی نور نظر آتا تھا ۔ حضرت آمنہ فرماتی ہیں جب آپ ﷺ اس دنیا میں تشریف لا ئے تو آپ ﷺ زمین پر گھٹنوں کے بل بیٹھے تھے اور آسمان کی طرف دیکھ رہے تھے آپ ﷺ کی ناف پہلے سے کٹی ہو ئی تھی ۔ حضرت عائشہ فرماتی ہیں آپ ان لوگوں سے روایت کر تی ہیں جو ولادت با سعادت کے وقت موجود تھے ۔ کہ مکہ میں ایک یہودی رہتا تھا جب نبی کریم ﷺ کی ولادت باسعادت کی رات آئی تو اس یہودی نے قریش کی ایک محفل میں جاکر پو چھا کہ اے قریش کیا آج رات تمھارے ہاں کو ئی بچہ پیدا ہوا ہے ؟ اہل قریش نے اپنی لا علمی کا اظہار کیا تو اس یہودی نے کہا میری با ت غور سے سنو اور یاد کر لو اِس رات آخری امت کا نبی پیدا ہو گا اور اے اہل قریش وہ تمھارے قبیلے سے ہو گا اور اس کے کندھے پر ایک جگہ با لوں کا گچھا ہو گا لوگ یہ بات سن کر اپنے گھروں کو چلے گئے اور گھروالوں سے پو چھاتو انہیں بتا یا گیا کہ آج رات عبداللہ بن عبدالمطلب کے ہاں ایک فرزند پیدا ہو ا ہے جس کو محمد ﷺ کے بابرکت نام سے موسوم کیا گیا ہے تو لوگوں نے جا کر اس یہودی کو بتایا اس نے کہا چلو اور مجھے مو لود دکھا چنانچہ وہ اسے لے کر حضرت آمنہ کے گھر آئے انہوں نے حضرت آمنہ کو کہا کہ ہمیں اپنا فرزند دکھا ۔ وہ بچے کو ا ٹھا کر ان کے پاس لے آئیں انہوں نے اِس بچے کی پشت سے کپڑا ہٹایا وہ یہودی بالوں کے اس گچھے کو دیکھ کر غش کھا کر گِر پڑا جب اسے ہوش آیا تو لوگوں نے پو چھا تمھیں کیا ہو گیا تھا ؟ تو اس نے حسرت سے کہا کہ بنی اسرائیل سے نبوت ختم ہو گئی ا ے اہل قریش تم خو شیاں منا اِس مولود مسعود ﷺ کی برکت سے مشرق و مغرب میں تمھاری عظمت کا ڈنکا بجے گا ( السیر النبویہ )۔

شاعر دربارِ رسالت ﷺ حضرت حسان بن ثابت کو پر وردگار نے لمبی زندگی عطا کی تھی زندگی کے ابتدائی ساٹھ سال کفر اور جہالت میں گزرے اور پھر جب قدرت مہربانی ہو ئی تو ساٹھ سال بحیثیت ایک سچے مومن کے زندگی گزاری آپ شہنشاہِ دو عالم فخر، موجودات باعث ِ تخلیق کا ئنات شافع محشر ، محبوب رب العالمین ، سید المرسلین رحم العالمین ، امام الاولین و الاخرین صاحب قاب و قو سین مو لائے کل ختم الرسل محسن انسانیت رہبر انسانیت سرور کا ئنات شہنشاہِ دو عالم ﷺ کی ولادت باسعادت کے بارے میں فرماتے ہیں ۔میری عمر ابھی سات آٹھ سال تھی مجھ میں اتنی سمجھ بوجھ تھی کہ جو میں دیکھتا اور سنتا تھا وہ مجھے یا د رہتا تھا ایک دن صبح سویرے ایک اونچے ٹیلے پر یثرب میں ایک یہودی کو میں نے چیختے چلاتے ہو ئے دیکھا وہ یہ بات باا ٓواز کہہ رہا تھا اے گروہ یہود سب میرے پاس اکٹھے ہو جا وہ اس کا اعلان سن کر بھاگتے ہو ئے اس کے پاس جمع ہو گئے اور اس سے پو چھا بتا کیا بات ہے تو اس نے کہا وہ ستارہ طلوع ہو گیا ہے جس نے اِس شب کو طلوع ہو نا تھا جو بعض کتب قدیمہ کے مطابق احمد ﷺ کی ولادت کی رات ہے ۔ کعب احبار کہتے ہیں کہ میں نے تورات میں دیکھا کہ اللہ تعالی نے حضرت مو سی کو نبی کریم ﷺ کی ولادت سے آگاہ کیا تھا اور مو سی نے اپنی قوم کو وہ نشانی بتائی تھی آپ نے فرمایا تھا کہ وہ ستارہ جو تمھارے نزدیک فلاں نام سے مشہور ہے جب اپنی جگہ سے حرکت کرے گا تو وہ وقت محمد مصطفی ﷺ کی ولادت کا ہو گا اور یہ بات بنی اسرائیل میں ایسی عام تھی کہ علما ایک دوسرے کو بتاتے تھے اور اپنی آنے والی نسل کو اس سے خبردار کر تے تھے وہب بن زمعہ کی پھوپھی کہتی ہیں کہ جب حضرت آمنہ کے ہاں شہنشاہِ دو جہاں ﷺ کی ولادت با سعادت ہو ئی تو آپ نے حضرت عبدالمطلب کو اطلاع دینے کے لیے کسی کو بھیجا جب وہ شخص خوشخبری لے کر خانہ کعبہ پہنچا تو عبدالمطلب حطیم میں اپنے بیٹوں اور قوم کے مردوں کے درمیان بیٹھے تھے جب آپ کو پو تے کی خوشخبری سنائی گئی کہ حضرت آمنہ کے ہاں بیٹا پیدا ہو ا ہے تو حضرت عبدالمطلب کی خوشی اور مسرت کا کو ئی ٹھکانہ رہا آپ فوری طور پر حضرت آمنہ کے ہاں آئے تو حضرت آمنہ نے پیدائش کے وقت جو نو ر کی برسات اور انوار وتجلیات کا مشاہدہ کیا اور آوازیں سنیں بتایا تو حضرت عبدالمطلب بہت خو ش ہو ئے ننھے حضور ﷺ کو پکڑ اور کعبہ شریف میں گئے وہاں کھڑے ہو کر بارگاہ ِ الہی میں شکر اور دعائیں کیں اور جو انعام اس نے فرمایا تھا اس کا شکر ادا کیا ابن واقد کے بقول اس با برکت اور خو شی کے موقع پر حضرت عبدالمطلب کی زبان پر یہ اشعار جاری ہو گئے ۔ سب تعریفیں اللہ تعالی کے لیے جس نے مجھے پاک آستینوں والا بچہ عطا فرمایا ۔یہ اپنے پنگھوڑے میں سارے بچوں کا سردار ہے اِسے بیت اللہ شریف کی پناہ میں دیتا ہوں ۔ یہاں تک کہ اس کا طاقتور اور توانا دیکھوں میں اس کو ہر دشمن اور ہر حاسد آنکھوں کے گھمانے والے کے شر سے اللہ کی پناہ میں دیتا ہوں ۔حضرت عباس فرماتے ہیں کہ حضو ر ﷺ جب پیدا ہو ئے تو آپ مختون تھے اور ناف کٹی ہو ئی تھی یہ معلوم کر کے آپ ﷺ کے داداحضرت عبدالمطلب کو بڑا تعجب ہوا اور فرمایا کہ میرے اِس بچے کی بڑی شان ہو گی ۔ حضرت عبدالمطلب فرماتے ہیں جس رات ننھے محمد ﷺ کی ولادت باسعادت ہو ئی اس رات میں کعبہ میں تھا میں نے بتوں کو دیکھا کہ سب بت اپنی جگہ سے سر بسجود سر کے بل گر پڑے ہیں اور دیوار کعبہ سے یہ آواز آرہی ہے مصطفی ﷺ مختار پیدا ہوا، اسکے ہاتھ سے کفار ہلاک ہوں گے اور کعبہ بتوں سے پاک ہو گا اور وہ اللہ کی عبادت کا حکم دے گا جو حقیقی بادشاہ اور سب کچھ جاننے والا ہے ۔بلا شبہ حضرت آمنہ کے آنگن میں چمکنے والے چاند اور مہکتے والے پھول کی خوشبو سے سارا عالم معطر اور روشن ہو گا ۔حفیظ جالندھری صاحب نے اِس حقیقت کو کس خوبصورت عقیدت بھرے انداز میں بیان کیا ہے ۔
ربیع الاول امیدوں کی دنیا ساتھ لے آیا
دعا ں کی قبولیت کو ہا تھوں ہاتھ لے آیا
ضیفوں بے کسوں ، آفت نصیبوں کو مبارک ہو
یتیموں کو غلاموں کو غریبوں کو مبارک ہو
مبارک ہو کہ ختم المرسلین تشریف لے آئے
جناب رحمتہ للعالمین تشریف لے آئے
بصد انداز یکتائی بغایت شان زیبا ئی
امین بن کر امانت آمنہ کی گود میں آئی
سلام اے آمنہ کے لال اے محبوب سبحانی
سلام اے فخر ِ موجودات فخر نو ع انسانی
سلام اے ظلِ رحمانی سلام اے نور یزدانی
تیرا نقش ِ قدم ہے زندگی کی لوح ِ پیشانی
سلام اے سر وحدت اے سراج بزم ِ ایمانی
زہے یہ عزت آفزائی زہے تشریف ارزانی
ربیع الاول میں صرف آپکا ظہور ِ قدسی نہیں ہوا بلکہ عالم نو طلوع ہوا ننھے محمد ﷺ نے جیسے ہی کر ہ ارض پر قدم رکھا اسی وقت سے تاریخ انسانی ایک شاندار دور میں داخل ہو گئی آپ ﷺ کے آنے سے حضرت آمنہ کا آنگن ہی روشن نہیں ہوا پو ری کا ئنات کا ذرہ ذرہ چمک اٹھا ایک عظیم انقلاب کا آغاز ہوا صدیوں سے انسانیت کی آنکھوں میں مضطرب خواب کو تعبیر ملی آپ ﷺ کی آمد سے زمین ارجمند اور آپ ﷺ کی پائیگا ہ کے بوسے سے آسمان بلند ہو گیا آپ کے چہرہ اقدس سے نور اور ہدایت کے چشمے پھوٹے جن کی روشنی سے کائنات کو روشنی ملی آپ ﷺ کے آنے سے ہی دنیا کو شرف انسانی کا حقیقی اندازہ ہوا ورنہ آپ ﷺ کے آنے سے پہلے حضرت انسان جہالت اور گمراہی کے اندھیروں میں صدیوں سے ٹامک ٹویاں مار رہا تھا اور وہ خود اپنی پہچان اور شان سے غافل تھا اسی بے خبری میں وہ اس نے ہزاروں جھوٹے خدا بنا رکھے تھے صنم کدوں میں جھوٹے معبودوں کے سامنے سجدہ ریز تھا ہر طاقتور اور چمکنے والی چیز کو اپنا خدا بنا رکھا تھا سورج چاند تاروں کی چمک پہاڑوں کی بلندی سے متاثر ہو کر انہیں خدا کا درجہ دے رکھا تھا ۔ راجوں شہنشاہوں نوابوں سرداروں اور طاقتور انسانوں کی طاقت اور اقتدار سے متاثر ہو کر انہیں خدا کے اوتار کا درجہ دے رکھا تھا نسل در نسل انسان جہالت اور ظلم کی پستیوں میں ڈوب چکا تھا ڈر خوف اس کی فطرت کا حصہ بن چکا تھا جنوں بھوتوں کو سجدے کر رہا تھا ۔ اور پھر محسن انسانیت نے آکر انسان کو بتایا کہ تیری حرمت کعبہ سے زیادہ ہے تیری ذات رازِ الہی ہے تو امانت الہی کا حامل ہے محسن ِ انسانیت کی تعلیمات سے جہالت اور گمراہی کے سیاہ اندھیرے دور ہو گئے اور انسان جو اپنے ہی ہاتھوں بنائے ہو ئے بتوں کی پو جا کر رہا تھا آج اس کی عظمت وہیبت سے پہاڑ سمٹ کر رائی بنے ہو ئے تھے جو انسان ، بتوں مو رتیوں بھوت پریت کے واہموں خوف سے نیم جان تھا اب صحرا و دریا اس کی ٹھوکر سے دو نیم بو ئے جا رہے تھے حضرت آمنہ کے آنگن میں اترنے والے چاند کی روشنی سے دنیا میں انقلاب آگیا سرور کائنات ﷺ نے جس ٹھوس عقیدے اور جامع نظام کی بنیاد رکھی وہ تاریخ انسانی کا عظیم ترین حقیقی انقلاب ہے اگرچہ دنیا میں اور بھی بہت سارے انقلاب آئے اور اپنی مدت پو ری کر کے چلے گئے لیکن تاریخ عالم کی پو ری معلوم تاریخ میں صرف ایک بار ہی پہلی اور آخری بار ایسا انقلاب برپا ہوا کہ تیس برس کے قلیل عرصے میں چند افراد نہیں پورا معاشرہ اپنے ظاہر باطن اور کر دار میں ایسی حقیقی اور واضح تبدیلی پیدا کر لیتا ہے کہ اِس معاشرے کے کردار کی روشنی سے پور ی دنیا فیض یاب ہو تی ہے حضرت آمنہ کے گھر چمکنے والے چاند محسن انسانیت ﷺ کی تیریسٹھ سال کی زندگی کا ایک ایک لمحہ صدیوں کی راہنمائی کا سامان فراہم کر تا نظر آتا ہے اور یہ عمل روز محشر تک اِسی طرح جاری رہے گا ۔

Check Also

Guangzhou Bases its Further Development on Green Innovation

Guangzhou Bases its Further Development on Green Innovation GUANGZHOU, China, Dec. 16, 2018 /Xinhua-AsiaNet/Knowledge Bylanes– ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *