Home / بزنس / FPCCI کے آئندہ انتخابات میں جمہوری عمل کو آسان بنانے کےلئے ڈی جی ٹی او تین شہروں میں پولنگ اسٹیشن بنانے کی اجازت دے : میاں انجم نثار

FPCCI کے آئندہ انتخابات میں جمہوری عمل کو آسان بنانے کےلئے ڈی جی ٹی او تین شہروں میں پولنگ اسٹیشن بنانے کی اجازت دے : میاں انجم نثار

 

 

 

FPCCI کے آئندہ انتخابات میں جمہوری عمل کو آسان بنانے کےلئے ڈی جی ٹی او تینشہروں میں پولنگ اسٹیشن بنانے کی اجازت دے : میاں انجم نثار

آئندہ الیکشن کمیشن کا انتخاب اپوزیشن کی مشاورت سے ہو گا ، فرد واحد کی مرضی نہیں چلے گی: چیئرمین بزنسمین پینل

لاہور (کامرس رپورٹرز)فیڈریشن پاکستان چیمبرز آف کامرس اینڈ انڈسٹری میں بزنسمین پینل کے چیئرمین میاں انجم نثار نے اخباری نمائندوں سے ملاقات میں کہا ہے کہ ڈائریکٹر جنرل ٹریڈ آرگنائزیشن (ڈی جی ٹی او) ایف پی سی سی آئی کے آئندہ الیکشن ٹرم ۰۲۰۲ منعقدہ دسمبر ۹۱۰۲ کے سلسلے میںکراچی کے ساتھ ساتھ لاہور اور اسلام آباد میں ایف پی سی سی آئی کے زونل دفاترمیں بھی ووٹرز کو ووٹ ڈالنے کی اجازت دی جائے تاکہ جمہوری عمل آسان اور شفاف ہو سکے اور اس سلسلے میں سیکرٹری جنرل ایف پی سی سی آئی کو متعلقہ ہدایات جاری کی جائیں کیونکہ ہر دفعہ کچھ ووٹرز اپنے مقامی شہر سے اپنی مصروفیت یا بیماری کی وجہ سے کراچی ووٹ ڈالنے نہیں جاتے اور یوں ٹرن اوور بھی کم رہتا ہے۔ چیئرمین بزنسمین پینل میاں انجم نثار نے کہا کہ چونکہ فیڈریشن چیمبر کے الیکشن ہر سال کراچی میں ہوتے ہیں اور تمام ای سی اور جی بی ممبران اور سپورٹرز کے ساتھ پاکستان بھر سے کراچی پہنچنا اور قیام و طعام اور الیکشن کی کاروائیوں میںحصہ لینا ایک بہت ہی تھکا دینے والا اور غیر پیداواری عمل ہے۔ چنانچہ آئندہ الیکشن کے لئے ڈی جی ٹی او کراچی کے علاوہ دو بڑے شہروں میں بھی پولنگ اور ووٹنگ کی اجازت دے اور اس سلسلے میں طریقہ کار وضع کیا جائے۔فیڈریشن میں الیکشن کمیشن کے سوال پر میاں انجم نثار نے کہا کہ ہر سال بر سر اقتدار گروپ اپنی پسندیدہ شخصیات کو الیکشن کمیشن مقررر کرتا ہے مگر اس بار اپوزیشن گروپ کی مشاورت کے بغیر یوبی جی کو الیکشن کمیشن بنانے کی اجازت نہیں دیں گے ۔ا نھوں نے مزید کہا کہ بر سر اقتدار گروپ نے ایف پی سی سی آئی کا معیار گرا دیا ہے اور بزنس کمیونٹی کی قومی اور بین الاقوامی سطح پر سبکی ہو رہی ہے ۔حتیٰ کہ اسلامک ممالک کی چیمبرز آف کامرس کی پاکستان میں ہونیوالی کانفرنس ایف پی سی سی آئی کی عدم دلچسپی اور عدم پیروی کی وجہ سے پاکستان سے منسوخ کر دی گئی ہے۔ جو پاکستان کی بد نامی کا باعث ہے۔ پاکستان کی بزنس کمیونٹی مسائل میں گھر چکی ہے مگر پریمئیر ادارہ ایف پی سی سی آئی انکی آواز بننے کی بجائے حکومتی تعریفوں میں مصروف ہے اور وہی کام کر رہی ہے جو ماضی کی حکومتوں کے ساتھ کرتی آئی ہے۔

Check Also

پیاف فاونڈرز الائنس امسال بھی بھرپور کامیابی حاصل کرے گا : میاں نعمان کبیر

  پیاف فاونڈرز الائنس امسال بھی بھرپور کامیابی حاصل کرے گا : میاں نعمان کبیر ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *